ہارون آباد: اہم پراجیکٹس فائلوں کی نذر‘ شہری سراپا احتجاج 

  ہارون آباد: اہم پراجیکٹس فائلوں کی نذر‘ شہری سراپا احتجاج 

  

 ہارون آباد (نامہ نگار) ہارون آباد تحصیل کو گزشتہ 17سالوں سے مسلسل نظر انداز کیا جا رہا ہے۔دانش سکول،فری انڈسٹریل زون اور ماڈل قبرستان، صاف پانی پروجیکٹ سمیت متعدد ترقیاتی پروجیکٹ فائلوں کی زینت بنے ہوئے ہیں۔تفصیلات کے مطابق (بقیہ نمبر38صفحہ6پر)

ہارون آباد تحصیل گزشتہ سترہ سالوں سے قومی دھارے میں ہونے والی ترقی میں صفر فیصد رہا۔تین سو ایکڑ زمین دانش سکول کیلئے مختص کی گئی سروے ہوا لیکن دانش سکول کا منصوبہ کھٹائی میں چلا گیا جبکہ دانش سکول کیلئے مختص کی گئی جگہ پر قبضہ مافیا نے اپنے پنجے گاڑنے شروع کردئیے ہیں۔چار سال قبل شہر خموشاں ماڈل قبرستان کیلئے چار سو کینال میں سے ایک سو کینال پر ماڈل قبرستان بنانے کا منصوبہ شروع کیا گیا جس کے لئے سروے بھی ہوا لیکن نامعلوم وجوہات کی بنا پر وہ منصوبہ پایہ تکمیل تک پہنچ نہ سکا۔اور اسی طرح نو سو ایکڑ پر ٹیکس فری انڈسٹریل زون اسٹیٹ بنانے کا منصوبہ بھی ایوان لاہور ہی میں گم ہو کر رہ گیا، وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کے دورہ بہاولنگر کے موقع پر ہارون آباد کے شہریوں کیلئے صاف پانی کا پروجیکٹ شروع کرنے کیلئے سروے بھی کیا لیکن وہ بھی سرے نہ چڑھ سکا، ہارون آباد شہر کی غلہ منڈی جوکہ گندم،چاول اور کپاس کے حوالے سے ملکی منڈیوں میں ایک نمایاں حیثیت رکھتی ہے مگر حکومتی عدم توجہی کی وجہ سے وہ بھی اپنی ساخت کھوتی جا رہی ہے جس وجہ سے یہ پورا علاقہ پسماندگی کے دلدل میں دھنستا جا رہا ہے۔شہریوں وقاص،عثمان،ابراہیم،عمر،عبداللہ،کامران و دیگر کا کہنا ہے کہ علاقہ ہارون آباد کو مسلسل نظر انداز کرنے کی وجہ سے احساس محرومی بڑھ رہی ہے جس کے باعث لوگ ذہنی اضطراب کا شکار ہیں۔شہریوں نے موجود ہ منتخب عوامی نمائندوں سمیت وزیر اعظم پاکستان عمران خان،وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار سے اصلاح احوال کا مطالبہ کیا ہے۔

احتجاج

مزید :

ملتان صفحہ آخر -