چھُونے سے قبل رنگ کے پیکر پگھل گئے

چھُونے سے قبل رنگ کے پیکر پگھل گئے
چھُونے سے قبل رنگ کے پیکر پگھل گئے

  

چھُونے سے قبل رنگ کے پیکر پگھل گئے

مٹھی میں نہ پائے خہ جگنو نکل گئے

پھیلے ہوئے تھے جاگتی نیندوں نیندوں کے سلسلے

آنکھیں کھُلیں تو رات لے منظربدل گئے

کب حدتِ گلاب پہ حرف آنے پائے گا

تتلی کے پر اُڑان کی گرمی سے جل گئے

آگے تو صرف ریت کے دریا دکھائی دیں

کن بستیوں کی سمت مسافر نکل گئے

پھر چاندنی کے دام میں آنے کو تھے گلاب

صد شکر نیند کھونے سے پہلے سنبھل گئے

شاعرہ: پروین شاکر

                     Choonay Say Qabl Rang K Paikar Pighall Gaey

                  Muthi Men Aa Na Paaey Keh Jugnu Nikall Gaey

                             Phailay Huay Thay Jaagti NeenDonK Sisalay

                  Aankhen Khulen To Raat K Manzar Badall Gaey

                           Kab Hiddat  e  Gulaab Pe Harf Aanay Paaey Ga

                                              Titli K Par Urraan Ki Garmi Say Jall Gaey

                                             Aagay To Sirf Rait K Darya Dikhaaee Den

                                       Kin Bastuon Ki Samt Musaafir Nikall Gaey

      Phir Chaandni K Daam Men Aanay Ko Thay Gulaab

Sadd Shukr Neend Khonay Say Pehlay Sanbhall Gaey

                                                                                                                             Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -