کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر

کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر
کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر

  

کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر

حرف آتا ہے مسیحائی پر

اُس کی شہرت بھی توپھیلی ہر سُو

پیار آنے لگا رُسوائی پر

ٹھہرتی ہی نہیں آنکھیں ،جاناں !

تیری تصویر کی زیبائی پر

رشک آیا ہے بہت حسن کو بھی

قامتِ عشق کی رعنائی پر

سطح سے دیکھ کے اندازے لگیں

آنکھ جاتی نہیں گہرائی پر

ذکر آئے گا جہاں بھونروں کا

بات ہوگی مرے ہرجائی پر

خود کو خوشبو کے حوالے کردیں

پُھول کی طرزِ پذیرائی پر

شاعرہ:  پروین شاکر

                 Kaisay Chorren Usay Tanhaaee Par

                                Harf  Aata Hay Maseehaaee Par

                 Uss Ki Shohrat Bhi To Phaili Har Su

                       Payaar Aanay Laga Ruswaaee Par

                           Thehrti Hi Nahen Aankhen Jaana

                                         Teri Tassveer Ki Zaibaaee Par

               Pashk Aaya Hay Bahut Husn Ko Bhi

                                    Qaamat  e  Eshq Ki Ranaaee Par

                Satha Say Daikh K Andaazay Lagen

                             Aankh Jaati Nahen Gehraaee Par

                    Zikr Aaey Ga Jahaan Bhanwron Ka

                                      Baat Ho Gi Miray Harjaaee Par

Khud Ko Khushbu K Hawaalay Kar Den

                                             Phool Ki Tarz  e  Zaibaaee par

                                                                         Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -