وہ جس سے رہا آج تک آواز کا رشتہ

وہ جس سے رہا آج تک آواز کا رشتہ
وہ جس سے رہا آج تک آواز کا رشتہ

  

وہ جس سے رہا آج تک آواز کا رشتہ

بھیجے مری سوچوں کو اب الفاظ کا رشتہ

تِتلی سے مرا پیار کُچھ ایسے بھی بڑھا ہے

دونوں میں رہا لذّتِ پرواز کا رشتہ

سب لڑکیاں اِک دوسرے کو جان رہی ہیں

یوں عام ہُوا مسلکِ شہناز کا رشتہ

راتوں کی ہَوا اور مرے تن کی مہک میں

مشترکہ ہُوا اک درِ کم باز کا رشتہ

تتلی کے لبوں اور گُلابوں کے بدن میں

رہتا ہے سدا چھوٹے سے اِک راز کا رشتہ

ملنے سے گریزاں ہیں ، نہ ملنے پہ خفا بھی

دم توڑتی چاہت ہے کِس انداز کا رشتہ

شاعرہ: پروین شاکر

                                  Wo Jiss Say Raha Aaj Tak Awaaz Ka Rishta

                     Bhaijay Miri Sochon Ko   Ab Alfaaz Ka Rishta

          Titli Say Mira Payaar Kuch Aisay Bhi Barrha Hay

                                Dono Men Rah Lazzat  e  Parwaaz Ka Rishta

                              Sab LArrkiaan Ik Doosray Ko Jaan Rahi Hen

                                    Yun Aam Hua Maslak  e  Sehnaaz Ka Rishta

                 Raaton Ki Hawaa Aor Miray Tan Ki Mahak Men

                           Mushtarka Hua Ik Dar  e  Kam Baaz Ka Rishta

                                         Titli K Labon Aor Gulaabon K Badan Men

                     Rehta Hay Sadaa Chotay Say Ik Raaz Ka Rishta

Milnay Say Guraizaan Hen Na Milnay Pe Kahfaa Bhi 

                        Dam Torrti Chahat Hay Kiss Andaaz Ka Rishta

                                                                                                               Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -