اپنی تنہائی کے منظر دیکھوں

اپنی تنہائی کے منظر دیکھوں
اپنی تنہائی کے منظر دیکھوں

  

حلقۂ رنگ سے باہر دیکھوں

خود کو خوشبو میں سمو کر دیکھوں

اُس کو بینائی کے اندر دیکھوں

عمر بھر دیکھوں کہ پل بھر دیکھوں

کس کی نیندوں کے چُرا لائی رنگ

موجۂ  زُلف کو چُھو کر دیکھوں

زرد برگد کے اکیلے پن میں

اپنی تنہائی کے منظر دیکھوں

موت کا ذائقہ لکھنے کے لیے

چند لمحوں کو ذرا مَر دیکھوں

شاعرہ: پروین شاکر

                                         Halqa  e  Rang Say Baahar Dekhun

  Khud Ko Khushboo Men Samo Kar Dekhun

                                         Uss Ko Benaaee K Andar Dekhun

             Umr Bhar Dekhun keh Pall Bhar Dekhun

                 Kiss Ki Neendon K Churaa Laaee Rang

                                 Maoja  e Zulf Ko Chhu Kar Dekhun

                                     Zard Bargad K Akailay pann Men

                                 Apni Tanhaaee K MAnzar Dekhun

                                          Maot Ka Zaaiqa Likhnay K Liay

      Chand Lamhon Ko Zara Mar Kar Dekhun

                                                                           Potess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -