کس کا چہرہ نقش تھا مہتاب میں

کس کا چہرہ نقش تھا مہتاب میں
کس کا چہرہ نقش تھا مہتاب میں

  

کیسے کیسے تھے جزیرے خواب میں

ؓبہہ گئے سب نیند کے سیلاب میں

ؒلڑکیاں بیٹھی تھیں پاؤں ڈال کر

روشنی سی ہوگئی تالاب میں

جکڑے جانے کی تمنا تیز تھی

آ گئے پھر حلقۂ گرداب میں

ڈوبتے سورج کی نارنجی تھکن

تیرتی تھی دیدۂ خوں ناب میں

وہ تو میرے سامنے بیٹھا تھا پھر

کس کا چہرہ نقش تھا مہتاب میں

شاعرہ: پروین شاکر

 Kaisay Kaisay Thay Jazeeray  Khaab Men

                      Beh Gaey Sab Neend K S ailaab Men

               Larkiyaan Bethi Then Paaon Daal Kar

                                                Roshni Si Ho Gai Talaab Men

                      Jakrray Jaanay Ki Tamanna Taiz Thi

                        Aa Gaey Phir Halqa  e  Gardaab Men

                                     Doobtay uraj Ki Naranji  Thakan

                       Tairti Thi Deeda  e  Khoon Naab Men

              Wo To Meray Saamnay Betha Tha Phir

Kiss Ka Chehra Naqdh Tha Mahtaab Men

                                                                      Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -