بارش ہوئی تو پھولوں کے تن چاک ہو گئے

بارش ہوئی تو پھولوں کے تن چاک ہو گئے
 بارش ہوئی تو پھولوں کے تن چاک ہو گئے

  

بارش ہوئی تو پھولوں کے تن چاک ہو گئے

موسم کے ہاتھ بھیگ کے سفاک ہو گئے

بادل کو کیا خبر ہے کہ بارش کی چاہ میں

کیسے بلند و بالا شجر خاک ہو گئے

جگنو کو دن کے وقت پرکھنے کی ضد کریں

بچے ہمارے عہد کے چالاک ہو گئے

لہرا رہی ہے برف کی چادر ہٹا کے گھاس

سورج کی شہ پہ تنکے بھی بے باک ہو گئے

بستی میں جتنے آب گزیدہ تھے سب کے سب

دریا کے رخ بدلتے ہی تیراک ہو گئے

سورج دماغ لوگ بھی ابلاغ فکر میں

زلف شب فراق کے پیچاک ہو گئے

جب بھی غریب شہر سے کچھ گفتگو ہوئی

لہجے ہوائے شام کے نمناک ہو گئے

شاعرہ : پروین شاکر

                   Baarish Hui To Phulon K Tan Chaak Ho Gaey

                        Maosam K Haath Bheeg K Saffaak Ho Gaey

Baadal Ko Kia Khabar Keh Baarish Ki Chaah Men

               Kaisay Buland  o  Baala Shajar Khaak Ho Gaey

               Jugnu Ko Din K Waqt Parakhnay Ki Zid Karen

                           Bachay Hamaaray Ehd K Chalaak Ho Gaey

                              Lehra Rahi Hay Barf  Ki Chaadar Hata Kar 

                 Suraj Ki Sheh Pe Tinkay Bhi Bebaak Ho Gaey

            Basti Men Jitnay Aab Gazeeda Thay Sab K Sab

                  Darya Ka Rukh Badaltay Hi Tairaak Ho Gaey

                              Suraj Dimaagh Log Bhi Iblaag  e  Fikr Men

                                Zulf  e  Shab  e  Firaaq K Paichaak Ho Gaey

         Jab Bhi Ghareeb  e  Shehr Say Kuch Guftagu Hui

                   Lehjay hawaa  e  Shaam K Namnaak Ho Gaey

                                                                                                  Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -