اُس کے پیار کا مرکز میرے نقص میں ہے

اُس کے پیار کا مرکز میرے نقص میں ہے
اُس کے پیار کا مرکز میرے نقص میں ہے

  

خوشبو کی ترتیب ، ہَوا کے رقص میں ہے

میری نمو ، میرے ہی جیسے شخص میں ہے

وہ میرا تن چُھوئے ، من میں شعر اُگائے

پیڑ کی ہریالی بارش کے لمس میں ہے

سوچ کا رشتہ سانس سے ٹوٹا جاتا ہے

لُو سے زیادہ جبر فضا کے حبس میں ہے

دن میں کیسی لگتی ہو گی ، سوچتی ہوں

ندی کا سارا حُسن تو چاند کے عکس میں ہے

میری اچھائی تو سب کو اچھّی لگی

اُس کے پیار کا مرکز میرے نقص میں ہے

ایسی خالی نسل کے خواب ہی کیا ہوں گے

جس کی نیند کا سَر چشمہ ہی چرس میں ہے

شاعرہ: پروین شاکر

             Kushbu Ki Tarteeb, Hawa K Raqs Mein Hay

 Meri Namu, Meray  Hi Jaisay  Shakhs Mein Hay

      Wo Mera Tan Chhuay, Man Mein Sher Ugaaey

                   Pairr Ki Haryaali Barish K Lams Mein Hay

                        Soch Ka Rishta Saans SayToota Jaata Hay

               Loo Say Zyada Jabr Fazaa K Habs Mein Hay

                                 Din Mein Kaisi Lagti Ho Gi, Sochti Hun

Nadi Ka Saara Husn To Chaand K Aks Mein Hay

                                                 Meri Achhaaee To Sbko Achhi Lagi

         Uss K Pyar Ka Markaz Meray Naqsm Men Hai

                          Aisi Khaali Nasl K Khaab Hi Kia Hon Gay

Jis K Neend Ka Sarchashma Tak Chars Mein Hay

                                                                                              Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -