صبح کے ہونٹ کِتنے نیلے ہیں

صبح کے ہونٹ کِتنے نیلے ہیں
صبح کے ہونٹ کِتنے نیلے ہیں

  

رات کے زہر سے رسیلے ہیں

صبح کے ہونٹ کِتنے نیلے ہیں

ریت پر تیرتے جزیرے میں

پانیوں پر ہَوا کے ٹِیلے ہیں

ریزگی کا عذاب سہنا ہے

خوف سے سارے پیڑ پیلے ہیں

ہجر، سناّٹا،پچھلے پہر کا چاند

خود سے ملنے کے کچھ وسیلے ہیں

دستِ خوشبو کرے مسیحائی

ناخنِ گُل نے زخم چھیلے ہیں

عشق سورج سے وہ بھی فرمائیں

جو شبِ تار کے رکھیلے ہیں

خوشبوئیں پھر بچھڑ نہ جائیں کہیں

ابھی آنچل ہَوا کے گیلے ہیں

کھڑکی دریا کے رُخ پہ جب سے کھُلی

فرش کمروں کے سیلے سیلے ہیں

شاعرہ:  پروین شاکر

                                            Raat K Zehr Say Raseelay Hen

                      Subha K Hont Kitnay Zehreelay Hen

                                           Rait Par Tairtay Jazeeray Milen

                                        Panion Par Hawaa K Teelay Hen

                                                    Raizgi Ka Azaab Sehna Parra

                         Kaof Say Saaray Pairr Peelay Parren

            Hijr Sannaata Pichlay Pahar Ka Chaand

    Khud Say Milanay K Kuch Waseelay Hen

                           Dast  e  Khushbu Karay Maseehaaee

Naakhun  e  Gull Nay Zakhm Chheelay Hen

                                     Eshq Suraj Say Wo Bhi Farmaaen

                                           Jo Shab  e Taar K Rakheelay Hen

        Khushbuen Phir Bicharr  Na Jaaen Kahen

                         Abhi Aanchal Hawa K Geelay Karen

        Khirrki Darya K Rukh Pe Jab Bhi Khulay

                           Farsh Kamron K Seelay Seelay  Hen

                                                                       Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -