میں جگنوؤں کی طرح رات بھر کا چاند ہُوئی

میں جگنوؤں کی طرح رات بھر کا چاند ہُوئی
میں جگنوؤں کی طرح رات بھر کا چاند ہُوئی

  

میں جگنوؤں کی طرح رات بھر کا چاند ہُوئی

ذرا سی دُھوپ نکل آئی اور ماند ہُوئی

حدودِ رقص سے آگے نکل گئی تھی کبھی

سو مورنی کی طرح عمر بھر کو راند ہوئی

مہِ تمام ! ابھی چھت پہ کون آیا تھا

کہ جس کے آگے تری روشنی بھی ماند ہوئی

ٹکے کا چارہ نہ گیّا کو زندگی میں دیا

جو مر گئی ہے تو سونے کے مول ناند ہوئی

نہ پُوچھ ، کیوں اُسے جنگل کی رات اچھی لگی

وہ لڑکی تھی جو کبھی تیرے گھر کا چاند ہوئی

شاعرہ: پروین شاکر

      Main Jugnuon Ki Trah Raat Bhar Ka Chaand Hui

                              Zara Si Dhoop Nikal Aaee Aor Maand Hui

           Hudoor  e Raqs Say Aagay Nikal Gai Thi Kabhi

                               So Morni Ki Trah Umr bhar Ko Raand Hui

                          Mah Tamaam, Abhi Chat Oe Kon Aaya Tha

                    Keh Jiss K Aagay Tiri Roshni Bhi Maand Hui

Takay Ka Chaand Na Gayyan Ko Zindagi Men Dia

                        Jo Mar Gai Hay To Sonay K Mool Naand Hui

                  Na Pooch Kiun Usay Jangal Ki Raat Achi Lagi

Wo larrki Jo Keh Kabhi Teray Ghar Ka Chaand Hui

                                                                                                     Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -