مرجھانے لگی ہیں پھر خراشیں

مرجھانے لگی ہیں پھر خراشیں
مرجھانے لگی ہیں پھر خراشیں

  

مرجھانے لگی ہیں پھر خراشیں

آؤ کوئی زخم گرتلاشیں

ملبوس برہنہ کھیتوں کے

پیراہنِ اَبر سے تراشیں

بادل ہیں کہ نیلی طشتری میں

رقصاں ہیں سفید یوں کی قاشیں

پیڑوں کی قباہی تھی قیامت

اوراُس پہ بہار کی تراشیں!

تاروں کی تو چال اور ہی تھی

جیتا کیے ہم اگرچہ تاشیں

اہرام ہے یا کہ شہر میرا

انسان ہیں یا حنوط لاشیں

سڑکوں پہ رواں‘ یہ آدمی ہیں

یا نیند میں چل رہی ہیں لاشیں

شاعرہ: پروین شاکر

Murjhaanay Lagi Hen Phir Kharaashen

                                Aao Koi Azkhm Gar Talaashen

                                         Malboos Barehna Khaiton K

                               Pairaahan  e  Abr Say Taraashen

                  Baadal Hen Keh Neeli Tashrti Men

              Raqsaan Hen Safaidion Ki Qaashen

                    Pairron Ki Qabaahi Thi Qayaamat

                               Aor Uss Pe Bahaar Ki Traashen

                                  Taaron Ki To Chaal Aor Hi Thi

                Jeeta Kiay Ham Agarcheh Taashen

                          Ehraam Hay Ya Keh Shehr Mera

                              Insaan Hen Ya Hanoot Laashen

        Sarrkon Pe Rawaan, Yeh Aadmi Hen

                        Ya Neend Men Jall Rahi Laashen

                                                      Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -