اشک آنکھ میں پھر اٹک رہا ہے

اشک آنکھ میں پھر اٹک رہا ہے
اشک آنکھ میں پھر اٹک رہا ہے

  

اشک آنکھ میں پھر اٹک رہا ہے

کنکر سا کوئی کھٹک رہا ہے

میں اُس کے خیال سے گُریزاں

وہ میری صدا جھٹک رہا ہے

تحریر اُسی کی ہے ، مگر دل

خط پڑھتے ہُوئے اٹک رہا ہے

ہیں فون پہ کس کے ساتھ باتیں

اور ذہن کہاں بھٹک رہا ہے

صدیوں سے سفر میں ہے سمندر

ساحِل پہ تھکن ٹپک رہا ہے

اک چاند صلیبِ شاخِ گل پر

بالی کی طرح لٹک رہا ہے

شاعرہ: پروین شاکر

Ashkq Aankh Men Phir Attak Raha Hay

                         Kankar Sa Koi Khattak Raha Hay

            MAin Uss K Khayaal Say Guraizaan

                         Wo Meri Sadaa Jhattak Raha Hay

                                TEhreer Uss Ki Hay , Magar Dil

         Khatt Parr htay Huay Attak Raha Hay

                                      Hen Fone Par Kiss Say Baaten

            Aor Zehn Kahaan Bhattak Raha Hay

       Sadion Say Safar Men Hay Samandar

                   Saahil Pe Thakan Tapak  Raha Hay

     Ik Chaand Saleeb  e  Shaakh  e  Gull Par

                                  Baali Ki Trah Lattak Raha Hay

                                                          Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -