‏دن ٹھہر جائے، مگر رات کٹے

‏دن ٹھہر جائے، مگر رات کٹے
‏دن ٹھہر جائے، مگر رات کٹے

  

‏دن ٹھہر جائے، مگر رات کٹے

کوئی صورت ہو کہ برسات کٹے

خوشبوئیں مجھ کو قلم کرتی گئیں

شاخ در شاخ مرے ہات کٹے

حرف کیوں اپنے گنوائیں جا کر

بات سے پہلے جہاں بات کٹے

چاند، آ مل کے منائیں یہ شب

آج کی رات ترے سات کٹے

پورے انسانوں میں گھس آئے ہیں

سرکٹے، جسم کٹے، ذات کٹے

شاعرہ: پروین شاکر

                    Din Thahir Jaey magar Raat Kattay

                      Koi Soorat Ho Keh Barsaat Kattay

Khushbuen Mujh Ko Qalam Karti Gaen

     Shaakh Dar Shaakh Miray Paat Kattay

               Maoja  e  Gull Hay Keh Talwaar Koi

                   Darmiaan Say Hi Manajaat Kattay

                  harf KiuN apnay Gawaaen Jaa Kar

             Baat Say Pehlay Jahaan Baat Kattay

  Chaand , Aa Mill K Manaaen Yeh Shab

                                Aaj Ki Raat Tiray Saath Kattay

Pooray Insaanon Men Ghuss Aaee Hen

           Sar Kattay, Jism Kattay, Zaat Kattay

                                                        Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -