نیند نے آنکھ پہ دستک دی تھی

نیند نے آنکھ پہ دستک دی تھی
نیند نے آنکھ پہ دستک دی تھی

  

جانے پھر اگلی صدا کس کی تھی

نیند نے آنکھ پہ دستک دی تھی

موج در موج ستارے نکلے

جھیل میں چاند کرن اُتری تھی

پریاں آئی تھیں کہانی کہنے

چاند رات نے لو ری دی تھی

بات خوشبوو¿ں کی طرح پھیل گئی

پیرہن میرا، شکن تیری تھی

آنکھ کو یاد ہے وہ پل اب بھی

نیند جب پہلے پہل ٹوٹی تھی

عشق تو خیر تھا اندھا لڑکا

حسن کو کون سی مجبوری تھی

کیوں وہ بے سمت ہوا جب میں نے

اُس کے بازو پہ دُعا باندھی تھی

شاعرہ: پروین شاکر

             Jaany Phir Agli Sadaa Kiss Ki Thi

     Neend Nay Aankh Pe Dastak Di Thi

                     Maoj Dar Maoj Sitaaray Niklay

               Jheel Men Chaand Kiran Utri Thi

Paryaan Aaee Then Kahaani Kehnay

                                Chaand Raat Nay Lori Di Thi

                      Baat Khushbu Ki Trah Phail Gai

                             Pairhan Mera, Shikan Teri Thi

     Aankh Ko Yaad Hay Wo Pall Ab Bhi

               Neend Jab Pehlay Pahill Toot i Thi

                 Eshq To Khair Tha Andha Larrka

                                 Husn Ko Konsi Majboori Thi

     Kiun Wo BeSamt Hua  Jab Main Nay

             Uss K Baazu Say Dua Baandhi Thi

                                                    Poetess:Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -