وفاقی وزیر فیصل واوڈا کے صحافیوں پر غلیظ حملے

وفاقی وزیر فیصل واوڈا کے صحافیوں پر غلیظ حملے
وفاقی وزیر فیصل واوڈا کے صحافیوں پر غلیظ حملے

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) تحریک انصاف پاکستان میں ایک نئی طرز کا طرزِ سیاست متعارف کروانے کے سبب بھی زیربحث رہتی ہے اور ناقدین اس معاملے پر بھی اس کے لتے لیتے رہتے ہیں کہ گالم گلوچ، بلاثبوت الزام تراشی اور دلیل سے بات کرنے کی بجائے مخالف نقطہ نظر رکھنے والے پر پل پڑنے کی روش اس قوم کو تحریک انصاف کے دیئے ہوئے تحفے ہیں۔ تحریک انصاف میں بہت سلجھے ہوئے اور دلیل سے بات کرنے والے لوگ بھی یقینا موجود ہیں مگر فیصل واوڈا جیسے لوگ بھی ہیں جو بے سبب سوشل میڈیا پر ہی صحافیوں سے گتھم گتھا نظر آتے ہیں اور گاہے ایسے الفاظ بول جاتے ہیں کہ ذی ہوش سوچتے رہ جائیں۔ ویب سائٹ ’نیادور‘ نے اپنی ایک رپورٹ میں فیصل واوڈا کی کچھ ایسی ہی ٹویٹس پیش کی ہیں جو انہوں نے مختلف صحافیوں ٹیگ کرتے ہوئے کیں اور ان صحافیوں پر غلیظ جملے کسے۔ مبشر زیدی نے ایک ٹویٹ جوابی ٹویٹ میں لکھا تھا کہ ”جوتا نہیں ملا ہو گا۔“ اس پر فیصل واوڈا نے انہیں جواب دیا کہ ”جب جوتا ملے گا تو آپ کو پڑے گا بھی۔ تب آپ کو پتہ بھی چل جائے گا۔“ گویا سوشل میڈیا پر کھلے عام جوتے مارنے کی دھمکی؟

فیصل واوڈا کی ایک ٹویٹ پر اسد علی طور نامی صحافی نے جوابی ٹویٹ میں کہا تھا کہ ”میرے شوہ میں ہر سیاسی جماعت کے بندے کو بلا تفریق دعوت دی جاتی ہے۔ اپوزیشن سے بھی اور حکومت سے بھی۔ چور کو بھی اور مومن کو بھی۔ گھٹیا نو دولتیے کو بھی اور باحیثیت صاحب ظرف کو بھی۔ آپ کی گھٹیا زبان میرے شو کا میرے نہیں، آپ کی اوقات بتاتی ہے۔“ اس کے جواب میں فیصل واوڈا یوں گویا ہوئے کہ ”تو‘ نے یہ تو مانا کہ ’تو‘ مجھے بلاتا تھا۔ تیری تکلیف میں سمجھتا ہوں۔ تیری اوقات تو صرف پانچ ہزار کا لفافہ ہے، پورا میڈیا جانتا ہے۔ تیرا پروگرام؟؟ بیچارے۔ اپنی اوقات اور قد سے بڑی بات نہ کر۔ تیری اصلیت سے سب واقف ہیں۔“سرل المیڈا کو ایک ٹویٹ میں فیصل واوڈا نے لکھا کہ ”ہیجان زدہ پاگل المیڈا! میں تیری تکلیف کو سمجھ سکتا ہوں۔ ایک بے روزگار آدمی ڈان لیکس کے بعد سے مفرور ہے۔ تمہارے آقا شاہد خاقان عباسی نے تمہاری رسی کھول دی؟؟ خاتون صحافی بے نظیر شاہ کو ایک ٹویٹ میں فیصل واوڈا نے کچھ یوں جواب دیا کہ ”کیسے کیسے لوگ خود کو صحافی کہتے ہیں!! جیسا ’صحافی‘ ویسا جواب!“

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -