پنجاب سوشل سیکیورٹی ہیلتھ مینجمنٹ کمپنی میں 1 ارب 70 لاکھ 96 ہزار کی بے ضابطگی کا انکشاف

پنجاب سوشل سیکیورٹی ہیلتھ مینجمنٹ کمپنی میں 1 ارب 70 لاکھ 96 ہزار کی بے ضابطگی ...
پنجاب سوشل سیکیورٹی ہیلتھ مینجمنٹ کمپنی میں 1 ارب 70 لاکھ 96 ہزار کی بے ضابطگی کا انکشاف

  



لاہور(آئی این پی) پنجاب سوشل سیکیورٹی ہیلتھ مینجمنٹ کمپنی میں 1 ارب 70 لاکھ 96 ہزار کی بے ضابطگی کا انکشاف۔

ذرائع کے مطابق کمپنی میں خلاف قانونی تعیناتیوں، بے ضابطگیوں اور بے قاعدگیوں پر مبنی رپورٹ سامنے آگئی، فنانس ڈیپارٹمنٹ کی منظوری کے بغیر تنخواہوں میں اضافے سے 65 کروڑ 31 لاکھ کا نقصان ہوا ہے، مظفر گڑھ اور رائیونڈ ہسپتال میں 37 افراد کی خلاف قانونی تعیناتی اور کنٹریکٹ میں اضافے سے7 کروڑ 44 لاکھ 89 ہزارکا نقصان ہوا۔ فنانس ڈپارٹمنٹ کیجانب سے ہدایات تھی کہ فنڈز بینک آف پنجاب میں رکھیں جائیں لیکن عملدرآمد نہیں کیا گیا اور فنڈز کمرشل بینک میں رکھے جس سے 7 کروڑ 19 لاکھ 62 ہزار کا نقصان ہوا۔سی ای او میجر جنرل اصغر علی نے رولز کے برعکس12سال زائد کام کیا۔ قانون کے مطابق60سال تک اجازت ہے لیکن یہ72سال کی عمر تک تعینات رہے ۔چیف ایگزیکٹو آفیسر کی خلاف قانون تعیناتی اور کنٹریکٹ میں اضافے سے5کروڑ 38 لاکھ 50 ہزارکا خسارہ ہوا، کمپنی میں 15 ملازمین ایسے رکھے گیے جنکی عمر 63 سال سے زائد تھی جس سے 4 کروڑ 16 لاکھ 43 ہزار کا نقصان ہوا۔ سی ایف او کی بھی تعیناتی کنٹریکٹ خلاف نکلی، جس کے باعث 3 کروڑ 58 لاکھ 63 ہزار روپے کا نقصان ہوا۔کمپنی میں 5 افراد ایسے تھے جو بیک وقت دو جہگوں پر کام کر رہے تھے جس کے باعث 2 کروڑ 11 لاکھ 97 ہزارکا خسارہ ہوا۔ بڈنگ کے بغیر ادویات کی خریداری سے 1 کروڑ 4 لاکھ 50 ہزار کا نقصان قومی خزانے کو ہوا۔ادویات کی خریداری میں حد سے تجاوز پر قومی خزانے کو 95 لاکھ 85 ہزار کا نقصان ہوا۔ آئی ٹی کے سامان کی خریداری میں بے ضابطگیوں کے باعث 93 لاکھ کا نقصان اٹھانا پڑا۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...