ممبر پنجاب بار کونسل کے گھر میں چھاپہ مارنے پر وکلاءکی ہڑتال، احتجاجی ریلی بھی نکالی

ممبر پنجاب بار کونسل کے گھر میں چھاپہ مارنے پر وکلاءکی ہڑتال، احتجاجی ریلی ...

لاہور(نامہ نگار)ممبر پنجاب بار کونسل کے گھر میں چھاپہ مارنے اور اس کے ساتھ بد تمیزی کرنے کے ساتھ ساتھ خواتین کے ساتھ ناروا سلوک کرنے پر وکلاءنے دوسرے روز بھی ہڑتال کرکے عدالتوں کا بائیکاٹ کیا اور احتجاجی ریلی بھی نکالی ۔وکلاءکی جانب سے ہڑتال کی وجہ سے ضلع کچہری،ماڈل ٹاﺅن کچہری،کینٹ کچہری،ایوان عدل سول کورٹس ،بینکنگ کورٹس ،ڈرگ کورٹ اور لیبر کورٹ سمیت دیگر ماتحت عدالتوں میں زیر سماعت سول دعویٰ جات فیملی دعویٰ جات،تنسیخ نکاح کے دعویٰ جات و دیگر سول و دیوانی دعویٰ جات کے علاوہ قتل،اقدام قتل،ڈکیتی ،چوری،حدود،منشیات اور دیگر فوجداری دفعہ کے تحت زیر سماعت24 ہزار کے قریب مقدمات التوا کا شکار ہوئے جبکہ سینکڑوں مرد وخواتین سائلین کو انتہائی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔

 یاد رہے کہ 2روز قبل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج سید حامد حسین شاہ کے حکم پر ڈی ایس پی سمن آباد سرکل اعجاز خان ایس ایچ او تھانہ سمن آباد نشاط علی چیمہ اور انچارج انوسٹی گیشن تھانہ سمن آباد انسپکٹر عمر رشید بٹ کے خلاف تھانہ سمن آباد میں مقدمہ نمبر119/14 بھی درج کررکھا ہے لیکن وکلاءنے اندراج مقدمہ کی مزید دو درخواستیں دائر کی گئی ہیں جس میں 2 وکلاءکے مبینہ اغوا اور چوہدری بابر وحید کے بھائی کے گھر میں چادر اور چار دیواری کو پامال کرتے ہوئے داخل ہونے اور خواتین سے بد تمیزی کرنے کے الزام میں مقدمات درج کرنے کی استدعا کی لیکن اس پر ایس پی متعلقہ نے مقدمہ درج کرنے سے انکار کردیا جس کے باعث گزشتہ روز بھی وکلاءنے ہڑتال کرکے عدالتوں کا بائیکاٹ کیا۔

مزید : میٹروپولیٹن 4