جنگ کا ماحول ،پاکستان اور بھارت کی سٹاک مارکیٹیں شدید مندی کا شکار، سرمایہ کاروں کے اربوں روپے ڈوب گئے

جنگ کا ماحول ،پاکستان اور بھارت کی سٹاک مارکیٹیں شدید مندی کا شکار، سرمایہ ...

  

نئی دہلی ( آن لائن) کنٹرول لائن کی خلاف ورزی کے بعد بھارت کی سٹاک مارکیٹ کریش کرگئی جس سے سرمایہ کاروں کے کروڑوں روپے ڈوب گئے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق انڈین سٹاک مارکیٹ 450 پوائنٹس تک نیچے گری جس سے سرمایہ کار سر پکڑ کر رہ گئے۔بارڈر کی صورتحال کی وجہ سے سٹاک مارکیٹ کا آغاز ہی 10800کی سطح سے ہوا اور گرتے گرتے 10740کی سطح پر پہنچ چکا ہے جبکہ سنسیکس میں بھی 200سے زائد پوائنٹس کی کمی کیساتھ ہوا۔ آخری اطلاعات کے مطابق سنسیکس میں 460.18پوائنٹس کی کمی ہوچکی ہے۔ادھر بھارتی روپے کی قدر میں بھی منگل کو ڈالر کے مقابلے میں 28پیسے کی کمی دیکھی گئی اور 71.26روپے میں ٹریڈ ہورہاہے جبکہ گزشتہ روز 70.98روپے میں ڈالر کی کلوزنگ ہوئی تھی۔ صرف 3 دن کے اندر اندر غیر ملکی سرمایہ کاروں نے بھارت سے کھربوں روپے کا سرمایہ نکال لیا۔ ۔غیر ملکی سرمایہ کاروں کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ وہ کسی بھی ایسے ملک میں سرمایہ کاری نہیں کر سکتے جہاں جنگ کا ماحول ہو۔ اسی باعث صرف تین روز کے اندر غیر ملکی سرمایہ کاروں نے بھارت کی مارکیٹ سے کھربوں روپے کا سرمایہ نکال لیا ہے۔ اس حوالے سے بھارت کے معاشی ماہرین مودی سرکار کو ہوش کے ناخن لینے کی تلقین کر رہی ہے۔

بھارتی مارکیٹ

کراچی (سٹاف رپورٹر)پاک بھارت کشیدگی،پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں کاروباری ہفتے کے دوسرے روزمنگل کوزبردست مندی رہی اور کے ایس ای 100انڈیکس 39600، 39500، 39400،39300، 39200، 39100، 38000اور 38900کی نفسیاتی حدوں سے گر گیا، مندی کے نتیجے میں سرمایہ کاروں کے1کھرب20ارب84کروڑروپے سے زائدڈوب گئے ،کاروباری حجم گذشتہ روز کی نسبت137.82فیصدزائدجبکہ85.12فیصد حصص کی قیمتوں میں کمی ریکارڈ کی گئی۔منگل کوکاروبارکاآغازملے رجحان میں ہوا،تاہم بھارت کی جانب سے پاکستانی سرحدی خلاف و رزی کے بعدمقامی سرمایہ گروپ تذبذب کا شکار نظرآئے اور اپنے حصص فروخت کرنے کو ترجیح دی، جس کے نتیجے میں پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں شدید مندی دیکھی گئی ،ٹریڈنگ کے دوران ایک موقع پر کے ایس ای100انڈیکس38726پوائنٹس کی نچلی سطح پرریکارڈ کیاگیا،تاہم غیرملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے منافع بخش سیکٹرکی نچلی سطح پر آئی ہوئی قیمتوں پر خریداری کی گئی جس کے نتیجے میں کے ایس ای100انڈیکس کی 38800پوائنٹس کی حدبحال ہوگئی تاہم اتارچڑھاؤکاسلسلہ سارادن جاری رہا۔مارکیٹ کے اختتام پر کے ایس ای100انڈیکس785,12پوائنٹس کمی سے38821.67پوائنٹس پر بندہوا۔ماہرین کے مطابق کاروبار میں یک دم ہونے والی مندی پر سرمایہ کاروں میں شدید تشویش کی لہر پائی جاتی ہے اور کاروباری حضرات سرمایہ لگانے میں محتاط رویہ اختیار کیے ہوئے ہیں۔مجموعی طور پر363کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہوا،جن میں سے37کمپنیوں کے حصص کے بھاؤمیں اضافہ،309کمپنیوں کے حصص کے بھاؤ میں کمی جبکہ17کمپنیوں کے حصص کے بھاؤ میں استحکام رہا۔سرمایہ کاری مالیت میں1کھرب20ارب84کروڑ37لاکھ22ہزار638روپے کی کمی ریکارڈ کی گئی جبکہ سرمایہ کاری کی مجموعی مالیت گھٹ کر77کھرب72ارب63کروڑ81لاکھ60ہزار607روپے ہوگئی۔منگل کومجموعی طور پر16کروڑ18لاکھ91ہزار270شیئرزکاکاروبارہوا،جوپیر کی نسبت9کروڑ38لاکھ18ہزار640 شیئرززائدہیں۔قیمتوں کے اتار چڑھاؤ کے حساب سے پاک ٹوبیکو کے حصص سرفہرست رہے ،جس کے حصص کی قیمت115.00روپے اضافے سے2415.00روپے اورآرکوماپاک کے حصص کی قیمت18.57روپے اضافے سے585.00روپے پر بند ہوئی۔نمایاں کمی نیسلے پاک کے حصص میں ریکارڈکی گئی،جس کے حصص کی قیمت100.00روپے کمی سے8500.00روپے اورانڈس موٹرزکے حصص کی قیمت46.65روپے کمی سے1242.91روپے ہوگئی ۔۔منگل کوکے ایس ای30انڈیکس387.50پوائنٹس کمی سے18703.23پوائنٹس،کے ایم آئی30انڈیکس1689.13پوائنٹس کمی سے65268.21پوائنٹس جبکہ کے ایس ای آل شیئر انڈیکس450.10پوائنٹس کمی سے28342.23پوائنٹس پر بند ہوا ۔

پاکستان مارکیٹ

مزید :

صفحہ اول -