ہائی کورٹ بار اسیوسی ایشن ملتان‘ آج الیکشن‘ 15 امیدوار آمنے سامنے

ہائی کورٹ بار اسیوسی ایشن ملتان‘ آج الیکشن‘ 15 امیدوار آمنے سامنے

  

ملتان (خصو صی  ر پو رٹر)  ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن کے آج 27 فروری کو ہونیوالے سالانہ انتخابات میں پانچ نشستوں پر 15 امیدواروں کے درمیان مقابلہ ہوگا۔ ہائیکورٹ بار کی صدارت کی نشست پر سید ریاض الحسن گیلانی اور محمد عرفان وائیں کے درمیان کانٹے دار مقابلہ متوقع ہے۔ نائب صدر کی نشست پر اورنگزیب خان بلوچ، فرخ مصطفی کمال اور محمد شہزاد حسین جعفری کے درمیان مقابلہ ہوگا۔ جنرل سیکرٹری کی نشست پر سجاد حیدر میتلا، چوہدری محمد دلدار برولہ، صفدر حسین سرسانہ اور محمد انور علی خاں رانا مد مقابل ہیں صدارت کے بعد دوسری اہم نشست جنرل سیکرٹری کی ہے۔فنانس سیکرٹری کی نشست پر مہر محمد نواز نول، عدنان بن ناصر حیدری اور ملک مشتاق حسین حصہ لے رہے ہیں۔ لائبریری سیکرٹری کی نشست پر مس فریدہ عثمان قریشی، مس نوشین افشاں بلوچ اور مس شہناز قاضی کے درمیان مقابلہ ہوگا۔ جبکہ ایگزیکٹو کی 7 نشستوں پر  سجاد حسین،فیصل عزیز چوہدری،ظہور احمد چوہدری،ملک محمد یوسف آرائیں،چوہدری طارق محمود،سید جنید ممتاز اور مس شمیم اختر پہلے ہی بلامقابلہ فاتح قرار پاچکے ہیں۔ پولنگ کا عمل صبح 9 بجے سے شام 5 بجے تک جاری رہے گا۔ جبکہ ایک سے دو بجے کھانے و نماز کا وقفہ ہوگا۔ ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن کے سالانہ انتخابات 2021-22 آج منعقد ہوں گے۔ اس سلسلے میں ہائیکورٹ بار کی جانب سے الیکشن انتظامات مکمل کر لیے گئے ہیں۔ وکلا انتخابات میں 24 پولنگ بوتھ قائم کیے گئے ہیں اور کل 8276 وکلا حق رائے دہی استعمال کریں گے  گزشتہ سال 7884 ووٹر ممبر لسٹ میں شامل تھے۔دریں اثنا چیئرمین الیکشن بورڈ کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق تمام ووٹ کاسٹ کرنے والے وکلا کو پاکستان بار کونسل کی شرائط شق نمبر 175-k  کے مطابق اصل شناختی کارڈ اور پنجاب بار کونسل کا جاری کردہ کارڈ لازمی ساتھ لانے کی ہدایت کی گئی ہے۔ ان دونوں کارڈ کے نہ ہونے کی صورت میں کسی وکیل کو ووٹ ڈالنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن ملتان کے آج ہونیوالے انتخابات میں امیدواروں نے الیکشن قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ہائیکورٹ اور بار کے اطراف میں موجود سڑکوں چوکوں پر بڑے سائز کے پینا فلیکس اور پوسٹر لگا دیے ہیں جس کے خلاف پنجاب بار کونسل کی ہدایت کے باوجود کوئی کاروائی نہیں کی جا سکی۔ یاد رہے کہ الیکشن قوانین کے مطابق امیدوار صرف ہینڈ بل یا کارڈ کے ذریعے انتخابی مہم چلا سکتا ہے لیکن امیدواروں کی جانب سے ہائیکورٹ بار کے اندر اور باہر بڑی تعداد میں پینا فلیکس اور پوسٹرز لگا دیے گئے ہیں جس سے ہائیکورٹ بار کے در و دیوار رنگین ہو گئے ہیں جس پر چئیرپرسن ایگزیکٹو کمیٹی پنجاب بار کونسل کی جانب سے بھی نوٹس لیتے ہوئے مذکورہ پینا فلیکس اور پوسٹرز اتارنے کی ہدایت کے ساتھ ذمہ دار امیدواروں کے خلاف کاروائی کرنے کی ہدایت بھی کی گئی تھی تاہم ملتان میں مذکورہ پینا فلیکس اور پوسٹرز ابھی تک نہیں اتارے جا سکے ہیں۔ اس بارے انتظامیہ کا کہنا ہے کہ بینرز ہٹانے کے لئے ہدایات جاری کر دی گئیں ہیں اور بینرز اتارنے کا سلسلہ جاری ہے جو جلد ہی ہٹا دئیے جائیں گے نیز خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کاروائی بھی ہوگی جس کے لئے شوکاز نوٹس جاری کیے جائیں گے جس کی کاروائی میں امیدواروں کو نااہلی کا سامنا بھی کرنا پڑ سکتا ہے۔

آمنے سامنے

مزید :

صفحہ اول -