ملک کے تمام موجودہ مسائل کا سبب ہمارا نظام عدل ہی ہے ، عطاءاللہ تارڑ 

ملک کے تمام موجودہ مسائل کا سبب ہمارا نظام عدل ہی ہے ، عطاءاللہ تارڑ 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہور(جنرل رپورٹر)وزیراعظم کے معاون خصوصی عطاءتارڑ نے کہا ہے کہ ملکی تاریخ میں پہلی بار سابق وزیر اعظم ایک ملزم کو ساتھ بٹھا کر پریس کانفرنس کرتا ہے ، دوہرے نظام عدل کے ذریعے عمران خان کی سہولت کاری کی جا رہی ہے پی ڈی ایم چاہتی ہیں الیکشن نوٹس کے معاملے پر آئین وقانون کی پاسداری ہو۔ماڈل ٹاو¿ن پارٹی سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر اعظم کے معاون خصوصی عطائ تارڑ نے کہا تحریک انصاف کا کوئی رہنما گرفتار بعد میں ہوتا ہے عمران خان پہلے اس کے کپڑے اتارنے والے بیان شروع کر دیتے ہیں ہر آدھے گھنٹے بعد ان کے لیڈر کا بیان تبدیل ہوتا ہے عمران خان قوم کے ساتھ مزاق کرنا بند کر دیں۔سپریم کورٹ کے الیکشن کے معاملے پر نوٹس میں پی ڈی ایم جماعتوں نے تحریری طور پر استدعا کر رکھی ہے کہ دوجج کو الگ کرکے فل کورٹ بنائی جائے انصاف ملنے کے ساتھ ساتھ انصاف ہوتا ہوا بھی نظر آنا چاہیے۔عمران نیازی نے ایک ملزم کو ساتھ بٹھا کر پریس کانفرنس کی ،اس ملزم نے پیسے آگے پہنچانے کا اعتراف کیا ہےتاریخ میں پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ سابق وزیر اعظم ایک ایسے مجرم کو ساتھ بٹھائے جس نے تسلیم کیا کہ جعلی کاغذات بنوا کر پیسے کمائے اور آگے پہنچائے،عمران خان ہر اپنے پارٹی ممبر کے کپڑے اتارنے کے حوالے سے کیوں کہتے ہیں،اس قوم سے اب مذاق کرنا چھوڑ دیں،نوبت یہ آگئی ہے کہ آپ نے بیٹی والے کیس میں توشہ خانہ کیس میں دفعات نہیں لگنے دی،اب نوبت یہ آگئی ہے کہ مجرمان کو ساتھ بٹھا کر پریس کانفرنس کررہے ہیں،قاضی فائز عیسی کی اہلیہ کو احتساب کے کٹہرے میں کھڑا کیا گیا تھا،یہ نہیں ہوسکتا کہ ان کے ساتھ کوئی اور طریقہ اختیار کیا جائے اور دوسروں کے لئے اور۔ہم نے تحریری اعتراض جمع کروایا ہے کہ ان کو بنچ میں نہیں بیٹھنا چاہیےایک ضد ہے کہ یہ دو بنچ میں بیٹھیں گےدوہرا نظام ہے کہ ایک کو بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر نکال دے دوسرے کو بیٹی نہ ماننے پر نہ نکالا جائے،عثمان ڈار کے پی اے کے اقبالی بیان پر لے نہ سو موٹو۔عمران خان آنے والی نسل کو تباہ کرنا چاہتا ہے،ہم بالکل چاہتے ہیں آئین اور قانون کی پاسداری ہو،تحریری طور پر پی ڈی ایم کی جماعتیں استعدائ کرچکی ہیں کہ دو جج الگ ہوجائے اور فل کورٹ بنادیں،بار بار سہولت کاری کیسے چلے گی۔جاکر ہائیکورٹ سے پتہ کریں مرتضی نقوی اور مصطفی نقوی کو کوئی انکار کرتا ہے،میں محنت کرکے یہاں تک پہنچا ہوں،باقی وکیلوں کا کیا قصور ہے کہ ان کے والد جج نہیں ہیں،الیکشن کے لئے ہم تیار ہیں،ایشو بنچ کا اسلئے ہے کہ غلام محمود ڈوگر نے پورے لاہور میں قبضے کروائے۔بنچ فکنسگ کی ٹرم اسی لئے آئی ہے،محمد خان بھٹی ان کے گھر بیٹھا ہے اور پرویز الہی فون پر بات کررہے تھے۔ایک لاڈلے کو گھر بیٹھ کر بیل مل جاتی ہے ایسا کیوں ہے،میں آج بھی کرائے کے گھر میں رہتا ہوں،رفیق تارڑ نے تین بیٹے ہیں کسی کو وکیل نہیں بننے دیا،اس وقت ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ کے تمام ججز کے اثاثے سامنے لے آئیں۔
عطاتارڑ

مزید :

صفحہ آخر -