بارکھان میں دھماکہ، 5افراد جاں بحق، 12زخمی، شہریوں کا احتجاج، لکی مروت میں بھی دھماکہ، ڈی آئی خان میں پولیس چوکی پر حملہ، ایس ایچ او سمیت 5اہلکار زخمی 

    بارکھان میں دھماکہ، 5افراد جاں بحق، 12زخمی، شہریوں کا احتجاج، لکی مروت ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


       بار کھان (این این آئی)بلوچستان کے ضلع بارکھان کے علاقے رکھنی بازار میں دھماکا ہوا جس کے نتیجے میں 5 افراد جاں بحق اور 12 زخمی ہوگئے، صدر مملکت عارف علوی، وزیر اعظم شہباز شریف، وزرائے اعلیٰ، وفاقی وزراء نے دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ دہشت گرد سزا سے بچ نہیں سکیں گے،ناحق خون بہانے والوں کو عبرت کی مثال بنائیں گے۔لیویز کنٹرول روم بارکھان حبیب اللہ نے تصدیق کی کہ دھماکے کے نتیجے میں 5 افراد جاں بحق اور 12 افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ایس ایس پی بارکھان نجیب پندرانی نے ہلاکتوں کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ زخمیوں کو قریبی ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔ڈی سی بارکھان عبداللہ کھوسہ کے مطابق دھماکا خیز مواد آئی ای ڈی کے ذریعے موٹرسائیکل پر نصب کیا گیا تھا جس پر 2 افراد سوار تھے۔عبداللہ کھوسہ کے مطابق دھماکے کے بعد زخمیوں کو رکھنی ہسپتال منتقل کر دیاگیاجبکہ پولیس نے موقع پر پہنچ کر علاقے کو گھیرے میں لے لیا۔ صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے بلوچستان کے علاقے بارکھان میں دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے دھماکے میں قیمتی جانی نقصان پر اظہارِ افسوس کیا۔صدر مملکت نے شہداء کے لواحقین سے اظہار تعزیت، شہداء کیلئے بلندی درجات کی دعا کی۔صدر مملکت نے دہشت گردوں کے مکمل خاتمے کیلئے کوششیں تیز کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔صدر مملکت نے زخمیوں کی جلد صحتیابی کیلئے بھی دعا کی۔وزیراعظم شہبازشریف نے بارکھان کے علاقے رکھنی بازار میں دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے قیمتی جانوں کے نقصان پر دکھ اور افسوس کا اظہار، اہل خانہ سے ہمدردی کیا اظہار کیا۔وزیراعظم نے وزیراعلیٰ اور آئی جی پولیس بلوچستان سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے زخمیوں کو بہترین طبی سہولیات فراہم کرنے کی ہدایت کی۔ وزیراعظم نے واضح کیا کہ دہشت گرد سزا سے بچ نہیں سکیں گے،ناحق خون بہانے والوں کو عبرت کی مثال بنائیں گے۔وزیراعظم نے جاں بحق افراد کی مغفرت، اہل خانہ کے لئے صبر اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی۔وزیراعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے دھماکے کی مذمت اور قیمتی جانوں کے ضیاع پر دلی رنج و غم کا اظہار کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ بے گناہ اور معصوم لوگوں کا خون بہانے والے انسانیت کے دشمن ہیں، دہشت گرد اپنے مذموم مقاصد کے حصول کے لیے بدامنی پیدا کر رہے ہیں، ملک دشمن عناصر کے عزائم کو کامیاب نہیں ہونے دیا جائے گا، دہشت گردی کے خلاف مزید مؤثر حکمت عملی اپنائی جائے گی۔اسپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف اور ڈپٹی اسپیکر زاہد اکرم درانی نے بلوچستان کے ضلع بارکھان میں دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے دھماکے کے نتیجے میں انسانی جانی نقصان پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا۔اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر نے متاثرہ خاندانوں سے دلی ہمدردی کا اظہار اور زخمیوں کی جلد صحتیابی کے لیے دعا کی۔ اسپیکر و ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی نے اللہ تعالیٰ سے واقعہ میں شہید ہونے والے افراد کے درجات کی بلندی اور سوگوار خاندانوں کو اس ناقابل تلافی نقصان کو برداشت کرنے کے لیے صبر جمیل عطاء فرمانے کی دعا کی۔چیئرمین سینیٹ محمد صادق سنجرانی نے بارکھان بلوچستان میں ہونے والے دھماکہ کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔۔ دریں اثناؤفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ خان نے بارکھان، بلوچستان کے علاقے رکھنی میں دھماکے کی شدید مذمت کی اور دھماکے میں قیمتی جانوں کے ضیاع پر گہرے دکھ اورغم کااظہار کیا۔وزیر داخلہ نے شہدا کے لواحقین سے تعزیت کا اظہار کیا۔وزیر داخلہ نے دھماکے کی رپورٹ طلب کر لی۔ وزیر داخلہ نے کہاکہ دہشت گرد بلوچستان میں امن اور ترقی کے دشمن ہیں،دہشتگرداپنے مذموم مقاصد میں کبھی کامیاب نہیں ہونگے۔انہوں نے کہاکہ اللہ تعالیٰ دہشت گرد حملے میں شہید ہونے والوں کے درجات بلند کریاور انکے لواحقین کو صبر جمیل عطاکرے۔۔سابق صدر آصف علی زرداری نے بارکھان میں دہشتگردی کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ دہشتگردی میں ملوث عناصر ناقابل معافی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ وفاقی اور صوبائی حکومت دہشتگردی میں ملوث تمام مجرموں کو انصاف کے کٹہرے میں لائے۔پیپلز پارٹی کے چیئرمین ووزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے بلوچستان کے ضلع بارکھان میں دہشتگرد دھماکے کی شدید مذمت کی ہے۔ میڈیا سیل بلاول ہاؤس کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق، پیپلزپارٹی چیئرمین نے رکھنی بازار میں پیش آنے والے قابل مذمت واقعے پر اپنے ردعمل میں کہا کہ پاکستان معصوم شہریوں کو نشانہ بنانے والوں کی بیخ کنی کیلئے پرعزم ہے۔ انہوں نے کہا کہ دہشتگردوں کا کوئی مذہب یا قوم نہیں ہوتی، وہ انسانوں کی شکل میں سفاک درندے ہیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے واقعے میں شہید ہونے والے شہریوں کے لواحقین سے دلی تعزیت و یکجہتی کا اظہار اور زخمیوں کی جلد صحتیابی کی دعا کی ہے۔بلوچستان کے ضلع بارکھان کی تحصیل رکھنی بازار میں دھماکے کے خلاف شٹر ڈاؤن ہڑتال کی گئی،بارکھان شہر کی تمام دکانیں احتجاجاً بند کر دی گئی ہیں،رکھنی بازار میں دھماکے کے خلاف تاجر برادری اور سول سوسائٹی کی جانب سے احتجاجی مظاہرہ بھی کیا گیا۔
دھماکہ

 لکی مروت(این این آئی)لکی مروت شہرکے سعید خیل علاقے میں ہونے والے بم دھماکے میں ایس ایچ او سمیت 4 پولیس اہلکار زخمی ہوگئے۔ یہاں پولیس حکام نے بتایا کہ نامعلوم شرپسندوں نے پولیس موبائل وین پر حملہ کرنے کیلئے سڑک کنارے دیسی ساختہ بم نصب کیا تھاجواس وقت زوردار دھماکے کے ساتھ پھٹ گیا جب ایس ایچ او رزاق خان کی سربراہی میں سٹی تھانے کی ایک پارٹی شہری علاقے میں واقع قبرستان کے قریب گشت کے دوران سڑک پر سے گزر رہی تھی۔انہوں نے بتایا کہ زخمی پولیس اہلکاروں میں ایس ایچ او رزاق خان، ڈی ایف سی عبدالحمید اور کانسٹیبل رفیق خان اور امداد اللہ شامل ہیں اور انہیں گورنمنٹ سٹی ہسپتال منتقل کردیا گیا۔بعد ازاں ڈی ایف سی عبدالحمید کو تشویشناک حالت میں بنوں ریفر کر دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ دھماکے کی آواز پورے شہری علاقے میں سنی گئی اور اس میں پولیس کی گاڑی کو شدید نقصان پہنچا،پولیس نے جائے وقوعہ پر پہنچ کر شرپسندوں کی تلاش شروع کردی۔پولیس چیک پوسٹ پر دہشتگردوں نے حملہ کردیا، فائرنگ کے تبادلے میں ایک اہلکار زخمی ہوگیا۔نجی ٹی وی کے مطابق ڈیرہ اسماعیل خان میں کلاچی تھانے کی روہڑی پولیس چیک پوسٹ پر دہشتگردوں نے حملے میں ایک اہلکار زخمی ہوگیا۔پولیس کے مطابق دہشت گردوں نے چیک پوسٹ پر حملے کے دوران چھوٹے بڑے ہتھیاروں کا استعمال کیا۔ ملزمان اور پولیس کے مابین سخت فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔ڈی پی او عبدالروف بابر قیصرانی نے ایس ایچ او کو موقع پر پہنچے کی ہدایت کردی، لائن پولیس سے بھی نفری جائے وقوعہ پر روانہ پوگئی ہے۔        
چوکی حملہ  

مزید :

صفحہ اول -