روڈ سائیکلنگ چیمپئن شپ

روڈ سائیکلنگ چیمپئن شپ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن ملکی اور بین الاقوامی سطح پر سائیکلنگ کے فروغ کے لیے دن رات کوشاں ہے، پاکستانی سائیکلسٹ کی بین الاقوامی مقابلوں میں شرکت کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ ملکی سطح پر سائیکلنگ کے زیادہ سے زیادہ مقابلوں کے انعقاد کو فیڈریشن یقینی بنا رہی ہے۔ اسی سلسلہ میں پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن اور خیبرپختونخوا سائیکلنگ ایسوسی ایشن کے اشتراک سے7 ویں قومی روڈ سائیکلنگ چیمپئن شپ کے (میز/ ویمنز) ایلیٹ اور جونیئر مقابلے پشاور میں منعقد ہوئے جو یادگار ایونٹ ثابت ہوا ایونٹ میں گیارہ ٹیموں نے شرکت کی جس میں بائیکستان‘ گلگت بلتستان‘ اسلام آباد‘ واپڈا سمیت دیگر الحاق شدہ یونٹس شامل تھے‘ روڈ سائیکلنگ چیمپیئن شپ ایشین اور یو سی آئی قوانین کے تحت منعقد کی گئی۔ جس میں ساڑھے تیرہ کلومیٹر کا ایک لوپ تھا‘ریس میں بائیکستان سائیکلنگ اکیڈمی مینز اور ویمنز نے ٹائٹل اپنے نام کیے‘ ریس کا افتتاح صوبائی وزیر صنعت عدنان جلیل نے کیا تھا جبکہ اختتامی تقریب گورنر ہاوس پشاور میں منعقد ہوئی جس میں گورنر خیبرپختونخوا حاجی غلام علی نے کھلاڑیوں میں انعامات تقسیم کئے کھلاڑیوں کو میڈلز اور ٹرافیوں سے نوازا گیا۔پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن کے سیکرٹری معظم خان نے پشاور میں منعقد ہونے والی چیمپیئن شپ کو یادگار قرار دیتے ہوئے اسے پاکستان سائیکلنگ کا روشن مستقبل قرار دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ نیشنل روڈ سائیکلنگ چیمپیئن شپ سے نیا ٹیلنٹ سامنے آیا ہے، جو اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ پاکستان میں سائیکلنگ کا بہت زیادہ ٹیلنٹ موجود ہے۔ معظم خان کا کہنا تھا کہ پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن کی ہمیشہ سے کوشش رہی ہے کہ وہ اپنے سائیکلسٹ کو قومی اور بین الاقوامی سطح پر نمائندگی کا موقع دے۔ روڈ سائیکلنگ چیمپیئن شپ سے سامنے آنے والے ٹیلنٹ کو مزید ٹریننگ دیکر انہیں بین الاقوامی مقابلوں کے لیے تیار کیا جائے گا، رواں سال جون میں ایشین سائیکلنگ چیمپیئن شپ کا تھائی لینڈ میں انعقاد ہونا ہے جس میں پاکستان کی مینز اور ویمنز سائیکلسٹ نے نمائندگی کرنی ہے۔ پشاور میں منعقدہ روڈ سائیکلنگ چیمپیئن شپ میں بہترین کھلاڑیوں کی نشاندہی کی گئی ہے جن کا جلد تربیتی کیمپ لگایا جائے گا۔ معظم خان کا کہنا تھا کہ پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن کے صدر سید اظہر شاہ کی کوششوں سے پاکستان سائیکلنگ کی بین الاقوامی مقابلوں میں زیادہ سے زیادہ شرکت ممکن ہو رہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان سائیکلنگ کا آئے روز گراف اوپر جا رہا ہے۔ ہم نے اپنے سائیکلسٹ کو قومی اور بین الاقوامی سطح پر کھیل کے مواقعے مہیا کرنے ہیں۔ پشاور میں منعقدہ چیمپیئن شپ سے جس طرح نیا ٹیلنٹ سامنے آیا ہے یہ اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ پاکستان میں ٹیلنٹ موجود ہے بس انہیں مواقعے دینے کی ضرورت ہے۔ سیکرٹری پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن معظم خان کا کہنا تھا کہ رواں سال جون میں تھائی لینڈ میں منعقد ہونے والی ایشین سائیکلنگ چیمپیئن شپ کے لیے کھلاڑیوں کو بہترین سہولیات مہیا کی جائیں گی تاکہ وہ چیمپیئن شپ میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کر سکیں۔ چیمپیئن شپ کی جونیئر کیٹگری میں بھی ہمارے پاس اچھے سائیکلسٹ سامنے آئے ہیں۔ اگر حکومت ہمارے ان نوجوان سائیکلسٹ کو جاب کے ساتھ مزید سہولیات فراہم کر ے تو کوئی شک نہیں کہ ہم بین الاقوامی سطح پر اپنے ملک کا نام روشن کر سکتے ہیں۔ پاکستان میں سائیکلنگ کا بین الاقوامی معیار کا انفراسٹرکچر موجود نہیں یہی وجہ ہے کہ پاکستان سائیکلنگ میں اتنی ترقی نہیں کر پا رہا۔ پاکستان کا واحد سائیکلنگ ویلوڈروم لاہور میں موجود ہے جہاں مقابلے کرانے کے لیے اس کی مرمت پر بھاری اخراجات آ جاتے ہیں۔ جبکہ بھارت سمیت دنیا کے تمام ترقی یافتہ ممالک نے اپنی سائیکلنگ کو فروغ دینے کے لیے جدید سہولیات پر مبنی سائیکلنگ ویلیو ڈروم بنا رکھے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ پشاور میں روڈ سائیکلنگ کے موقع پر پولیس اور ریسکیو ٹیموں کے تعاون پر ان کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ ان کا کہنا تھا کہ ان مقابلوں میں 110 سے زائد سائیکلسٹس نے شرکت کی‘ ملک بھر سے آنیوالے کھلاڑیوں نے اپنی بہترین صلاحیتوں کا مظاہرہ کیا‘ نتائج کے مطابق ویمنز جونیئر روڈ ریس میں بائیکستان کی مریم علی نے گولڈ‘ ملیحہ علی نے سلور اور سنیہا خالد نے برانز میڈل جیتا‘ مینز جونیئر روڈ ریس میں خیبرپختونخوا کے نئی اللہ نے گولڈ‘ سندھ کے اذان نے سلور اور بلوچستان کے کریم نے برانز میڈل اپنے نام کیا‘ ویمنز ایلیٹ ریس میں واپڈا کی نادیہ بی بی نے گولڈ‘ بائیکستان کی کوکب سرور نے سلور جبکہ بائیکستان سائیکلنگ اکیڈمی کی کنیزہ ملک نے برانز میڈل جیتا‘ مینز انڈر23 کیٹیگری کی روڈ ریس میں خیبرپختونخوا کے ثنا اللہ گولڈ‘ بلوچستان کے شبیر حسین سلور اور کرینک اکیڈمی کے شان برانز میڈل جیتنے میں کامیاب ہوئے‘ مینز ماسٹر روڈ ریس کے مقابلوں میں واپڈا کے ہارون رشید گولڈ‘ کرینک کے عبدالوہاب نے سلور اور واپڈا کے غلام قادر نے برانز میڈل جیتا‘ ویمنز ایلائٹ ٹیم ٹائم ٹرائل کے مقابلوں میں بائیکستان اکیڈمی نے پہلی‘ پنجاب نے دوسری جبکہ خیبرپختونخوا نے تیسری پوزیشن حاصل کی‘ مینز انڈر23 انفرادی ٹائم ٹرائل کے مقابلوں میں واپڈا کے عبدالواحد نے گولڈ‘ بائیکستان کے اسماعیل انور نے سلور اور کے پی کے ثنا اللہ نے برانز میڈل اپنے نام کیا‘ ویمنز جونیئر انفرادی ٹائم ٹرائل کے مقابلوں میں بائیکستان کی مریم علی نے گولڈ‘ پنجاب کی سنیہا خالد نے سلور اور بائیکستان کی ملیحہ علی نے برانز میڈل جیتا۔
٭٭٭


‘ مینز جونیئر انفرادی ٹائم ٹرائل مقابلوں میں بلوچستان کے کریم نے گولڈ‘ کے پی کے نبی اللہ نے برانز اور اسلام آباد کے نثار علی نے برانز میڈل اپنے نام کیا‘ ویمنز ایلائٹ انفرادی ٹائم ٹرائل کے مقابلوں میں بائیکستان اکیڈمی کی رابعہ گولڈ‘ واپڈا کی راجیعہ شبیرسلور اور بائیکستان کی بسمہ چوہدری برانز میڈل جیتنے میں کامیاب ہوئیں‘ مینز ایلیٹ انفرادی ٹائم ٹرائل کے مقابلوں میں بائیکستان اکیڈمی کے شان ولی نے گولڈ‘ علی الیاس نے سلور اور عزت نے برانز میڈل جیتا۔ تمام ایونٹس کے ونر کھلاڑی چیمپئن قرار پائے ہیں۔ معظم خان کا کہنا تھا کہ روڈ سائیکلنگ چیمپیئن شپ کے یہی کھلاڑی تھائی لینڈ میں ہونیوالی ایشین سائیکلنگ چیمپیئن شپ میں پاکستان کی نمائندگی کریں گے۔
٭٭٭

نیا ٹیلنٹ سامنے آیا ہے، معظم خان سیکرٹری پی سی ایف

مزید :

ایڈیشن 1 -