دیکھ پھولوں سےجل گئے دامن۔۔۔  اب چراغوں  کا     اعتبار  کہاں

دیکھ پھولوں سےجل گئے دامن۔۔۔  اب چراغوں  کا     اعتبار  کہاں
دیکھ پھولوں سےجل گئے دامن۔۔۔  اب چراغوں  کا     اعتبار  کہاں

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

سایۂ  زلف  کج  شعار   کہاں 
یہ  کرم  اور  چشم  یار   کہاں  

حسن کو خوئےاحتیاط غضب
عشق  کو  ضبط انتظار  کہاں 

دوگھڑی ٹھہر جا روپہلی شام 
روز ملتے ہیں  جاں نثار  کہاں 

ایک درویش بےگلیم سےپوچھ
 دل پہ  دنیا  کا   اختیار  کہاں 

پھر نہ کہنا کہ حوصلہ کم تھا 
"سر تو حاضر ہے تیغ یار کہاں "

اے  شب   انتظار  ختم  نہ  ہو 
اور  باقی  ہے   اب  قرار  کہاں 

اف  جگر   چیرتی   ہوئی  آواز 
کوئی  روتا   ہے  زار  زار  کہاں

دیکھ پھولوں سےجل گئے دامن 
اب چراغوں  کا     اعتبار  کہاں 

زمزمے   یہ    ہوا   نشاط  انگیز
سب  ہیں   رقاصۂ  بہار  کہاں 

پیکر  حسن     بجلیاں   نہ  گرا
اب  سکت  اور  چشم  یار کہاں 

اب کہاں ہوش ، ہے  کہاں دامن 
اور     گریبان   تار   تار    کہاں 

ہاں بتادے کہاں رہوں  بے ہوش 
اور   رہنا    ہے    ہوشیار   کہاں

تیرا  بزمی   شہید   جام  الست
اس کو خوف صلیب و دار کہاں 

کلام :سرفراز بزمی( سوائی مادھوپور ،راجستھان انڈیا)