دھرنا ،سول نا فرمانی ، ہنڈی ، سی پیک کو نقصان اور آئی ایم ایف کو خط ۔۔۔؟سینیٹر  عرفان صدیقی نے عمران خان کے انداز سیاست پر سوالات اٹھا دیئے

دھرنا ،سول نا فرمانی ، ہنڈی ، سی پیک کو نقصان اور آئی ایم ایف کو خط ...
دھرنا ،سول نا فرمانی ، ہنڈی ، سی پیک کو نقصان اور آئی ایم ایف کو خط ۔۔۔؟سینیٹر  عرفان صدیقی نے عمران خان کے انداز سیاست پر سوالات اٹھا دیئے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد ( خصوصی رپورٹ ) عمران خان ہماری 77سالہ قومی تاریخ کا واحد کردار ہیں جو ملکی مفادات سے قطعِ نظر، اپنی ذات کے مدار میں گردش ہی کو معراجِ سیاست سمجھتے ہیں ۔ 4ماہی دھرنا ،سول نا فرمانی ، ہنڈی کا مشورہ ، سی پیک کو نقصان ، پی آئی اے کو اربوں کا نقصان اور آئی ایم ایف کو خط ، یہ ’’صدمۂِ جاریہ‘‘ جانے کب تک چلے گا۔سینیٹر  عرفان صدیقی نے عمران خان کے انداز سیاست پر سوالات اٹھا دیئے۔

"جنگ میں شائع ہونیوالے اپنے کالم بعنوان "پتھر کو جونک کیسے لگے؟" میں انہوں نے لکھا  کہ کوئی کچھ بھی کہہ لے، انتخابات کے بعد بھی ہمہ پہلو عدم استحکام اور سیاسی انتشار کی بنیادی وجہ ہماری قومی سیاست میں ایک ایسے آتش مزاج کردار کی نمود ہے جو اپنی عادت، خصلت، جبلت اور سرشت کے اعتبار سے سیاسی تقاضوں اور قرینوں سے دُور کا تعلق واسطہ بھی نہیں رکھتا۔ نرگسیت (NARCISSISM) ایک موذی مرض ہے جو آکاس بیل کی طرح انسان کی ہر شاخِ فکر واحساس کو چوس لیتا ہے۔ عمران خان ہماری 77سالہ قومی تاریخ کا واحد کردار ہیں جو ملکی مفادات سے قطعِ نظر، اپنی ذات کے مدار میں گردش ہی کو معراجِ سیاست سمجھتے ہیں۔ 28 سالہ سیاسی سفر کے دوران اُن کی آتش بیانی، بارودپاشی، تصادم وپیکار، ہنگامہ وفساد اور انتشار وخلفشار کے لاتعداد مظاہر ملیں گے لیکن خوردبینی آنکھ سے بھی اُن کی نرم گفتاری، کشادہ قلبی، عالی ظرفی، تحمل وبرداشت ، رواداری اور افہام وتفہیم کی کوئی ادنیٰٰ سی نظیر بھی نہیں ملے گی۔

اسلامی تعلیمات سے انحراف اور گناہوں کے باوجود کسی کلمہ گو سے ’’مسلمان‘‘ ہونے کا شرف نہیں چھینا جاسکتا نہ اس کے ’جذبۂِ اسلامی‘ کی نفی کی جاسکتی ہے۔ اسی طرح آئی۔ایم۔ایف کے قرض کو پاکستان کے انتخابی عمل کی جانچ پڑتال سے مشروط کرانے کی کوشش سے عمران خان کی ’’ حُبّ الوطنی ‘‘ یا پاکستانیت پر کوئی حرف نہیں آتا۔ لیکن یہ سوال اپنی جگہ موجود ہے کہ کیا واقعی انہوں نے 28 سالہ سیاسی زندگی میں حُبّ الوطنی کے تقاضوں کو اپنی سیاست اور ذات سے بالاتر رکھا ہے؟سیاسی لغت میں نامطلوب مکروہات کی پیوندکاری، عوامی جلسوں میں حریفوں پر بارشِ الزام ودشنام، معتبر قومی رہنماؤں کو بے ڈھنگے القابات سے نوازنا، نوجوان پود کی رگوں میں بارود بھرنا، سیاسی مخالفین کو چُن چُن کر نشانہ بنانا اور کشتِ سیاست میں نفرت وعداوت کے بیج بونا وہ اقدامات ہیں جن کو سرِدست ایک طرف رکھ دیتے ہیں لیکن کیا واقعی آئی۔ایم۔ایف کے حضور تازہ عرضی گزارنے سے قبل خان صاحب نے کبھی اس نوع کا کوئی قدم نہیں اٹھایا؟ کیا تحریکِ عدم اعتماد کی چاپ سن کر انہوں نے جان بوجھ کر آئی۔ایم۔ایف سے طے شدہ شرائط کو پامال کرکے آنے والی حکومت کے لئے شدید مشکلات پیدا نہیں کردی تھیں؟ اگست 2022میں خان صاحب ہی کی ہدایت پر سینیٹر شوکت ترین نے خیبرپختون خوا اور پنجاب کے وزرائے اعلیٰ سے کہا تھا کہ وہ آئی۔ایم۔ایف کو خط لکھ کر اپنی طرف سے بریت کا اظہار کردیں تاکہ متوقع پروگرام کا راستہ روکاجاسکے۔ خان صاحب ہی کے حکم پر فواد چوہدری نے دوٹوک بیان دیا تھا کہ اگر آئی۔ایم۔ایف نے پاکستان کو قرض دیا تو خیبرپختون خوا اور پنجاب ذمہ داری نہیں لیں گے۔ محض اپنی سیاست کے لئے قومی سلامتی سے متعلق ایک حساس خفیہ دستاویز سے کھیلنا قومی مفاد کے کس گوشۂِ خاص میں سجایاجائے؟ 2014کے 4ماہی دھرنے کے دوران انہوں نے جان بوجھ کر صرف اس لئے چینی صدر کے دورۂِ پاکستان کو سبوتاژ کیا کہ بھاری چینی سرمایہ کاری سے نوازحکومت کو تقویت نہ ملے۔ انہی دھرنوں میں عوام کو ٹیکس نہ دینے اور سول نافرمانی کی تلقین کی گئی۔ بیرونِ ملک پاکستانیوں سے کہا گیا کہ وہ ہنڈی کے ذریعے رقوم بھیجیں تاکہ پاکستان زرمبادلہ کے قحط کا شکار ہوجائے۔ ان کے وزراءکے بے ڈھنگے بیانات نے سی پیک منصوبے کو شدید نقصان پہنچایا اور پائیلٹس کے بارے میں ایک احمقانہ بیان کے سبب پی۔آئی۔اے کو اربوں ڈالر کا نقصان ہوا۔ یہ ’’صدمۂِ جاریہ‘‘ جانے کب تک چلے گا۔

کالم میں عرفان صدیقی نے مزید لکھا کہ حالیہ انتخابات نے ان کے سامنے، تند خوئی اور تلوارزنی کے بجائے حکمت ودانش اور مصلحت کیش گریز پائی کی کئی راہیں کھول دی تھیں۔ اُن کے چاہنے والوں نے اُنہیں مالا مال کردیا تھا۔ افسوس کہ یہ توشہ خانہ بھی انہوں نے کوڑیوں کے مول لٹادیا۔ نتائج کی برکھا برس رہی تھی کہ پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ (ن) سے ہاتھ نہ ملانے کا اعلان کر کے اپنے ارکان کی بھاری بھرکم تعداد کو بے وزن کردیا۔ اس اعلان سے اُن کے دونوں بڑے حریف ایک دوسرے کے قریب ہوگئے۔یکایک سیاسی تنہائی کا احساس ہوا تو جمعیت علمائے اسلام، جماعت اسلامی، وحدت المسلمین غرض ہر اُس کوچۂِ رقیب میں سر کے بل پہنچے جہاں سے اپنی بے چہرگی کو کوئی نام پانے کی ذرا سی بھی توقع ہوئی۔ بالآخر اَسی کے لگ بھگ ارکان کا دریا، یک رُکنی سنی اتحاد کونسل کی جوئے کم آب میں ضم ہوکر معدوم ہوگیا۔ اب قومی اسمبلی میں ’تحریک انصاف‘ کی شناخت رکھنے والا کوئی رُکن نہیں ہوگا۔ اسے پَرلے درجے کی بے ہنری ہی کہاجاسکتا ہے۔ خیبرپختون خوا اسمبلی میں55نئے چہرے آئے ہیں۔ ان میں کئی ایک معتدل، متوازن اور متحمل بھی ہوں گے۔ لیکن خان صاحب کی نگاۂِ انتخاب علی امین گنڈا پور ہی پر جا ٹِکی جنہوں نے ابھی تک حلف بھی نہیں اٹھایا لیکن اعلان کیا ہے کہ ’’فضل الرحمن پاگل ہوگیا ہے۔ میں آتے ہی اُسے پاگل خانے میں ڈالوں گا۔‘‘ نرگسیت زدہ لیڈر کی خوئے پیکار بدستور پھَن پھیلائے کھڑی ہے اور پارلیمنٹ کے ایوان کو اوجڑی کیمپ بنانا منتہائے مقصود ٹھہرا ہے۔

کالم کے آخر میں سینیٹر عرفان صدیقی نے لکھا کہ اُدھر دھاندلی کے الزامات کا کوہ ہمالیہ کھڑا کردیاگیا ہے۔ 2013 کے 35 پنکچر اَب فارم 45 میں ڈھل چکے ہیں۔ پنڈی کمشنر کو 11 برس قبل کا افضل خان بنانے کی ناکام کوشش کی گئی۔ تب بیلٹ پیپر کسی اردو بازار میں چھپ رہے تھے اب یہ کام لکشمی چوک کے کسی چھاپہ خانے میں ہورہا ہے۔ جھوٹ کا طومار ہے اور الزامات کا انبار۔ کوئی حقیقت کی کرید پر آمادہ نہیں۔ جو لابنگ فرمز خرید کر اُنہیں پاکستان کے چہرے پر کالک تھوپنے کیلئے کروڑوں ڈالر لٹا سکتا ہے اور جو پاکستان کو انسانی حقوق کی قتل گاہ باور کرانے کیلئے دنیا بھر میں، بھارتی سفارت کاروں کے پہلو بہ پہلو متحرک ہوسکتا ہے اُس سے قومی سیاست کا مہذب کردار بننے کی توقع ریگزاروں میں لالہ وگل کھلانے کی سعیِٔ رائیگاں کے سوا کچھ نہیں۔