کشمیر میں : قتل عام کی تحقیقات کیلئے عالمی برادری آگے آئے

کشمیر میں : قتل عام کی تحقیقات کیلئے عالمی برادری آگے آئے

  

 سرینگر(کے پی آئی)حریت کانفرنس گ کے چیرمین سید علی گیلانی نے کہا ہے کہ 25برسوں کے دوران کشمیرمیں کئے گئے قتلِ عام کی تحقیقات کرانے کی ذمہ داری عالمی برادری کی ہی۔ شہدائے ہندوارہ پر قصبہ میں ہڑتال کرنے پر عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے گیلانی نے کہاکہ اس واقعہ کی کسی غیر جانبدار ادارے کے ذریعہ تحقیقات کی جائے تاکہ مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچایا جائی۔ گیلانی نے کہاکہ جموں کشمیر میں پچھلے 25سال کے دوران میں بھارتی فورسز نے ہزاروں بے گناہ شہریوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا ہی، البتہ قتل عام کے ان واقعات کی تحقیقات کرانے میں بھارت کسی قسم کی دلچسپی نہیں دکھا رہا ہی، لہذا عالمی برادری کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اس سلسلے میں آگے آئے اور نہتے شہریوں کو انصاف دلانے کے حوالے سے اپنی ذمہ داری کو پورا کری۔5جنوری 1990 میں ہندواڑہ قتل عام کی یاد میں اتوار کو قصبے میں گیلانی کی اپیل پر ہڑتال کی گئی جبکہ تحریک حریت کے اہتمام سے ہندواڑہ کے علاوہ چوگل اور صدر دفاتر واقع حیدرپورہ میں شہدا کی بلندء درجات کے لیے دعائیہ مجالس کا اہتمام عمل میں لایا گیا۔ شہدائے ہندواڑہ کے حق میں قصبے کی مختلف مساجد کے علاوہ تحریک حریت کے صدر تحصیل غلام حسن ملک کی قیادت میں چوگل میں ایک بڑی دعائیہ مجلس کا انعقاد عمل میں لایا گیا جبکہ تحریک حریت دفاتر واقع حیدرپورہ پر بھی ایک تقریب کا اہتمام کیا گیا۔ ان مختلف مجالس میں بی ایس ایف اہلکاروں کے ہاتھوں قتل کئے گئے 17عام شہریوں کے لیے ایصال ثواب کیا گیا جبکہ ان کے لواحقین کے ساتھ دلی ہمدردی اور وابستگی کا اظہار کیا گیا۔ صدرِ ضلع کپواڑہ محمد یوسف لون نے آج دن کے حوالے سے اپنے ایک بیان میں کہا کہ ضلع کپواڑہ نے جاری تحریکِ آزادی میں سب سے زیادہ قربانیہاں پیش کی ہیں اور اس ضلع کے لوگوں پر بھارتی فورسز نے بے پناہ مظالم ڈھاتی رہی ہیں۔ یہاں کوئی گھر یا خاندان ایسا نہیں ہی، جس کے کسی لخت جگر کو شہید نہ کیا گیا ہو اور اس کے ساتھ کسی قسم کی زیادتی نہ ہوئی ہو۔ جدوجہد سے متاثر بیواں اور یتیموں کی سب سے زیادہ تعداد اسی ضلع سے تعلق رکھتی ہے اور عصمت دری کے سب سے زیادہ واقعات بھی یہاں ہی پیش آئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس ضلع سے چند ناعاقبت اندیش عناصر ابھرے ہیں جوان تمام قربانیوں پر پانی پھیرنا چاہتی ہیں۔ ادھرمقامی حقوق انسانی کارکنان محمد احسن اونتو نے شہری ہلاکتوں کی تحقیقات کسی غیر جانبدار بین الااقوامی ادارے کے ذریعے کرانے کی مانگ کی۔انہوں نے کہاکہ ریاستی حقوق انسانی کمیشن میں ایک عرضی دائر کررکھی ہے اور مذکورہ کمیشن نے سانحہ ہندواڑہ کی تحقیقات کے حوالے سے ریاستی پولیس جانکاری بھی طلب کی لیکن مقامی حقوق البشر کمیشن کی طرف سے اجرا کردہ نوٹسوں کو خاطر میں نہیں لایا جا رہا ہے اور ابھی تک مذکورہ بٹالین کی نشاند ہی بھی نہیں کی۔

مزید :

عالمی منظر -