پاکستان کے خدشات چین کے خدشات ہیں ،ہمارے لئے پاکستان کا کوئی متبادل نہیں ،چین

پاکستان کے خدشات چین کے خدشات ہیں ،ہمارے لئے پاکستان کا کوئی متبادل نہیں ...

  

                                   بیجنگ/راولپنڈی(اے این این،مانٹیرنگ ڈیسک،آن لائن)چین کی اعلیٰ قیادت نے پاکستان کے خدشات کواپنے خدشات قراردیتے ہوئے کہاہے کہ چین کےلئے پاکستان کا کوئی متبادل نہیں ہوسکتا ،دونوں ملکوں کی منزل ایک ہے، دوست ملک کی ہر سطح پر مدد کی جائے گی۔ پیرکو فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر)کے مطابق چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف نے اپنے دوروزہ دورہ چین کے دوران چینی چیئرمین پیپلز سیاسی مشاورتی کانفرنس ژو ینگشینگ،وزیر خارجہ مس مینگ اور سنٹرل ملٹری کمیشن کے وائس چیئرمین جنرل فان سے ملاقاتیں کیں۔ پیپلزکانفرنس کے چیئرمین نے پاک فوج کے سربراہ سے ملاقات میں کہاکہ پاکستان چین کا سب سے زیادہ پراعتماد دوست ملک ہے، پاکستان کے خدشات ہمارے خدشات ہیں، چینی حکومت اورعوام پاکستان کے ساتھ کھڑے ہیں اور ہر سطح پر دوست ملک کی مدد کی جائے گی۔ آرمی چیف نے چین کی وزیر خارجہ مس مینگ سے ملاقات کی اس موقع پر وزیر خارجہ نے کہاکہ پاکستان چین کا آزمودہ دوست ہے۔ دونوں ملکوں کی دوستی شخصیات سے ماورا ہے۔ پاکستان کے تحفظات چین کے تحفظات ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ چین کے لئے پاکستان کا کوئی متبادل نہیں ہوسکتا اور دونوں ملکوں کی منزل ایک ہے۔ جنرل راحیل شریف نے چین کے وائس چیئرمین سنٹرل ملٹری کمشن جنرل فان سے بھی ملاقات کی جس میں خطے کی سیکورٹی سمیت اہم معاملات پر تبادلہ خیالات کیا گیا ۔ جنرل فان نے دہشت گردی کے خلاف قومی اتفاق رائے کو سراہتے ہوئے کہا کہ بلاتفریق آپریشن ضرب عضب دہشت گردوں کے خلاف فیصلہ کن کارروائی ثابت ہو رہا ہے۔ جنرل راحیل شریف نے چینی قیادت کی جانب سے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی حمایت اور تعاون پراظہار تشکر کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کو منطقی انجام تک پہنچانے کے لئے عالمی تعاون ضروری ہے۔ انہوں نے پاکستان سے دہشت گردی کے ناسور کو ہمیشہ کیلئے ختم کرنے کا عزم بھی دہرایا اورکہاکہ پاک فوج کو قوم کا تعاون حاصل ہے ، دہشتگردی کے خاتمے کیلئے آخری حد تک جائیں گے ۔ انہوں نے کہاکہ دہشت گردی کے خاتمے کے لیے کوآرڈی نیشن اور بین الاقوامی توجہ کی ضرورت ہے ۔ اس سے پہلے دورے کے پہلے دن چیف آف آرمی اسٹاف جنرل راحیل شریف نے بیجنگ میں پیپلز لبریشن آرمی کے ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کیا ۔ ان کے چینی ہم منصب جنرل چی جیانگا بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ آرمی چیف کو گارڈ آف آنر بھی پیش کیا گیا ۔ دونوں سپہ سالاروں کی ملاقات میں پاک چین طویل المدتی دفاعی تعاون بڑھانے پر اتفاق ہوا ۔ دونوں ملکوں کے درمیان انٹیلی جنس شیئرنگ کا فیصلہ بھی کیا گیا ۔

مزید :

صفحہ اول -