مخالفین کے تشدد، کرنٹ ٹریفک حادثات، زہر خورانی سے 6افراد ہلاک

مخالفین کے تشدد، کرنٹ ٹریفک حادثات، زہر خورانی سے 6افراد ہلاک

خانیوال،محسن وال،میاں چنوں،کوٹ ادو،دائرہ دین پناہ،کہروڑ پکا،رحیم یار خان،ہارون آباد،خانقاہ شریف(نمائندگان)مخا لفین نے تشدد کرکے بزرگ مارڈالا،کرنٹ سے بچی ہلاک،ٹریفک حادثات نے4افراد کی جان لے لی خانیوال،محسن وال سے نمائندہ پاکستان،نامہ نگار (بقیہ نمبر11صفحہ12پر )

کے مطابق نواحی علاقہ محسن وال میں موٹرسائیکل رکشہ میں چادر آنے سے محمد سیعد 20سال سکنہ 3/8اے آر موقع پر جاں بحق ہوگیا۔میاں چنوں سے نمائندہ خصوصی کے مطابق میاں چنوں کے نواحی گاؤں118پندرہ ایل میں پیش آیا جس میں بارہ سالہ لڑکی بارش کے دوران واٹر پمپ چلاتے کرنٹ لگنے سے موقعہ پر جاں بحق ہو گئی ،ٹرین کی پٹڑی کراس کرتے ایک نامعلو م شخص کچی آبادی مہرآباد کے قریب ٹرین کی زد میں آگیا جس اسکی دونوں ٹانگیں کٹ گئیں زخمی کو تشویشناک حالت میں تحصیل ہسپتال میاں چنوں پہنچایا گیا جہاں پر ابتدائی طبی امداد کے بعد شدید زخمی کو نشتر ہسپتال ملتان ریفر کر دیا گیا ۔کوٹ ادو،دائرہ دین پناہ سے تحصیل رپورٹر،نامہ نگار کے مطابق وارڈ نمبر3کا رہائشی25سالہ نوجوان منیر حسین عرف منی قصائی جو کہ فاروق ٹریڈرز پر سیلز مین تھا گزشتہ روز چوک سرور شہید سے وصولی کرکے واپس کوٹ ادو موٹر سائیکل پر آرہا تھا کہ اڈہ بہار کے قریب سامنے سے آنے والی تیز رفتار بس سے ٹکرا گیا جسے سر میں شدید چوٹیں آئیں،زخمی منیر حسین کو رورل ہیلتھ سنٹر دائرہ دین پناہ لایا جا رہا تھا کہ وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے جاں بحق ہو گیا،جبکہ نا معلوم بس ڈرائیور بس سمیت موقع سے فرار ہو گیا۔کہروڑ پکا سے سٹی رپورٹر کے مطابق چک نمبر22M کے رہائشی محمد عباس لودھرا نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ 6مئی کی رات کو اللہ وسایا اللہ ڈتہ محمد امین محمد مظہر محمد اعجاز محمد اکرم اسلحہ کلہاڑی اور ڈنڈے سوٹوں سے مسلح ہوکر آگئے اور للکار کر کہاکہ آج انہیں بے عزتی کا مزہ چکھادو اور میرے والد حق نواز اور بھائی محمد نیاز پر ڈنڈوں سوٹو ں سے بارش کردیا ہم نے والد او ر بھائی کو تشویشناک حالت میں ٹی ایچ کیو ہسپتال پہنچایا جہاں پران کی حالت کے پیش نظر انہیں بہاولپور ریفر کردیا گیا وہاں پر چار روز موت و حیات کی کشمکش میں رہنے کے بعد میرے والد اللہ کو پیارے ہوگئے پولیس تھانہ ڈھنوٹ سے کارروائی کرتے ہوئے ایک ملزم اللہ وسایا کو گرفتار کیا ہے لیکن باقی ملزمان ہمیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں پولیس نے لڑائی کا مقدمہ درج تو کیا ہے لیکن اب والد کی وفات کے بعد آٹھ ماہ کاعرصہ گزرجانے کے باوجود قتل کا مقدمہ درج نہیں کررہی ہے اور ملزمان کو گرفتار بھی نہیں کررہی ہے حالانکہ میڈیکل میں بھی تشدد سے موت ثابت ہوچکی ہے ہمارا آر پی او ملتان اور ڈی پی او لوھراں اسد سرفراز سے مطالبہ ہے کہ ہمارا قتل کا مقدمہ درج کیاجائے اور ملزمان سے تحفظ فراہم کیا جائے۔رحیم یار خان سے ڈسٹرکٹ رپورٹر،بیورو نیوز کے مطابق رحیم یارخان سے ڈسٹرکٹ رپورٹر،بیورو نیوز کے مطابق اوباڑوکارہائشی 25سالہ محمدافضل اپنی مرضی سے پسندکی شادی کرناچاہتاتھاجس کواس کے والدین نے منع کردیاجس سے دلبرداشتہ ہوکراس نے گھرمیں موجودزہریلاسپرے بھاری مقدارمیں پی لیاجسے معلوم ہونے پرورثاء نے نازک حالت میں ہسپتال منتقل کیاجہاں وہ جسم میں زہرپھیل جانے کے باعث جانبرنہ ہوسکااوردم توڑگیا۔خانپور کٹوراکارہائشی 35سالہ فیروزعلی موٹرسائیکل پرگھرسے شہرجارہاتھاکہ راستے میں اسے تیزرفتارٹریکٹرٹرالی نے بے قابوہوکرکچل دیاجس سے وہ شدیدزخمی ہوگیاجسے طبی امداد کے لیے ہسپتال منتقل کیاگیا۔ہارون آباد سے نامہ نگار کے مطابق جنرل بس سٹینڈ کے عقب میں کھیت سے ایک نامعلوم 50سالہ خاتون کی لاش برآمد ہو ئی ہے مبینہ طور پر خاتون کی ہلاکت کرنٹ لگنے سے معلوم ہوتی ہے کیونکہ جہاں سے لاش برآمد ہوئی ہے وہاں بجلی کی تار بھی زمین پر ہی موجود تھی ،اطلاع ملتے ہی ڈی ایس پی فورٹ عباس زبیر خان بنگش اور ایس ایچ اوتھانہ سٹی انسپکٹر محمد یونس بٹرنفری کے ہمراہ موقع پر پہنچے اور لاش کو قبضے میں لے کر تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال ہارون آباد پہنچا دیا ۔خانقاہ شریف سے نمائندہ پاکستان کے مطابق 35سالہ نوجوان کا قتل اللہ ڈتہ ولد خادم حسین قوم داد پوترا سکنہ مو ضع ودانی کا رہائشی تھا اس کا دوست محمد امجد سکنہ ہزاری والااس کے گھر آیا جس کو اپنے مو ٹر سائیکل پر بہٹا کر اپنے ساتھ لے گیا ۔صبح نو بجے واپس اس کو گھر چھوڑ گیا ۔جہاں اس کو الٹیاں شروع ہو گئیں حالت زیادہ خراب ہو نے گھر پر ہی دم توڑ گیا متوفی کے کزن محمد اجمل نے 15پر کال کی جس پر ایس ایچ او مسافر خانہ ہمراہ نفری گھر پہنچ گئی نعش کو اپنے قبضے میں لے لیکر پو سٹ مارٹم کے آر ایچ سی خانقاہ شریف سمہ سٹہ روانہ کر دیا ۔پو سٹ مارٹم رپورٹ آنے کے بعد کاروائی عمل میں لائی جا ے گی متوفی کے ورثہ کا مو قف ہے کہ محمد امجد نے اس کو کوئی ز ہر یلی چیز دیکر جان سے مارا ہے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر