دنیا بھر کے 400صحافی ٹرمپ کیخلاف متحد

دنیا بھر کے 400صحافی ٹرمپ کیخلاف متحد

برلن(مانیٹرنگ ڈیسک)جرمن اخبار ’زوڈوئچے سائٹنگ‘ نے ابتدائی طور پر پانامہ پیپرز کی دستاویزات حاصل کیں لیکن منصوبہ بہت بڑا ہونے کے باعث اس نے دنیا بھر کے 400صحافیوں کو اس میں شامل کر لیا جنہوں نے مل کر اس پر کام کیا اور کئی ممالک کی حکومتوں کو ہلا کے رکھ دیا۔ اب یہ چار سو صحافی ایک بار پھر اکٹھے ہو گئے ہیں لیکن اس بار کسی بڑے منصوبے پر نہیں بلکہ دنیا کے طاقتور ترین آدمی، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف۔ یہ اعلان ’زوڈوئچے سائٹنگ‘کے صحافیوں فریڈرک اوبرمیئر اور بیسچین اوبرمیئر کی طرف سے سامنے آیا ہے۔ برطانوی اخبار دی گارڈین میں شائع ہونے والے اپنے آرٹیکل میں انہوں نے لکھا ہے کہ ’’ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی پہلی پریس کانفرنس میں سی این این کے ایک رپورٹر کی نام لے کر توہین کی لیکن اس وقت کمرے میں موجود کوئی بھی صحافی اپنے ساتھی کی بے عزتی پر اس کے ساتھ کھڑا نہیں ہوا۔ صحافت پر ٹرمپ کا یہ پہلا حملہ نہیں تھا اور یقیناًآخری بھی نہیں ہو گا۔‘‘فریڈرک اوبرمیئر اور بیسچین اوبرمیئر نے مزید لکھا ہے کہ ’’امریکی صحافیوں کو ڈونلڈ ٹرمپ کو اپنے شعبے میں دراڑ ڈالنے سے روکنا ہو گا۔ شاید پیشہ وارانہ مسابقت انہیں ایسا کرنے سے روکے لیکن انہیں چاہیے کہ وہ اس برعکس کام کریں۔ متحد ہوں، معلومات ایک دوسرے کے ساتھ شیئر کریں اور ایک دوسرے سے تعاون کریں۔ شاید یہ کام امریکی صحافیوں کے لیے بالکل نیا ہو گا۔ اگلی بار جب ڈونلڈ ٹرمپ کسی ایک رپورٹر کی توہین کرتا ہے ہم متحد ہوں گے۔اگر ٹرمپ کسی رپورٹر کے سوال کا جواب نہیں دیتا تو اس سے اگلے جس رپورٹر کو بولنے کی اجازت ملے گی وہ اسی پچھلے رپورٹر کا سوال دہرائے گا۔ اگر اس رپورٹر کو بھی روک دیا جاتا ہے تو اس سے اگلا رپورٹر بھی وہی سوال پوچھے گا۔ یہ سب کچھ ہمارے لیے نیا ہو گا لیکن اگر ہم چاہتے ہیں کہ آئندہ ہمارے کسی ساتھی کی ہتک نہ ہو تو ہمیں یہ سب کرنا ہو گا۔‘‘

متحد

مزید : صفحہ اول