چھ کمپنیوں کی سربراہی چھوڑ دی

چھ کمپنیوں کی سربراہی چھوڑ دی
 چھ کمپنیوں کی سربراہی چھوڑ دی

  

واشنگٹن ( اے این این ) امریکہ کا صدر منتخب ہونے کے بعد ڈونلڈ ٹرمپ نے اب تک جو اہم فیصلے کیے ہیں، ان میں اپنی ملکیتی کمپنیوں کے عہدے چھوڑنا بھی شامل ہے۔ انہوں نے ٹرمپ آرگنائزیشن کے زیر انتظام چھ کمپنیوں اور اداروں کے انتظامی عہدوں سے استعفے پر دستخط کردیے ہیں۔ وائٹ ہاس کے ترجمان شون سپائسر نے بتایا تھا کہ نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹرمپ آرگنائزیشن کی انتظامی سربراہی سے گذشتہ ہفتے استعفی دے دیا تھا۔ آئندہ اس ادارے کی ذمہ داریاں ان کے دو بیٹے ڈونلڈ جونیر اور ایریک سیٹولین سنبھالیں گے۔ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی انتخابی مہم کے دوران اپنے حامیوں سے یہ وعدہ کیا تھا کہ وہ صدر منتخب ہو کر اپنے تمام کاروباری اور غیر کاروباری اداروں کے عہدے چھوڑ دیں گے اور صرف ملک و قوم کی خدمت کریں گے۔ انہوں نے اپنی چھ کمپنیوں کی سربراہی سے استعفی دے کر امریکیوں سے کیا گیا وعدہ پورا کردیا۔ٹرمپ آرگنائزیشن کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ٹرمپ نے انویسٹ منٹ فنڈ، اس کی ذیلی کمپنیوں اور دیگر ملکیتی کمپنیوں کے امور اپنے بیٹوں ڈون ایرک اور ڈائریکٹر فنانس آلین فائسلبرگ کو سپرد کرتے ہوئے تمام اختیارات انہیں سونپ دیے ہیں۔خیال رہے کہ امریکا کے نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ بنیادی طور پر ایک کاروباری شخصیت ہیں اور کینیڈا، جنوبی امریکا، یورپ، مشرق وسطی اور ایشیا سمیت دنیا کے 25 ممالک میں 144 کمپنیاں کام کررہی ہیں۔امریکی نشریاتی ادارے سی این این نے صدر ٹرمپ کے مالیاتی فیصلوں کی تفصیلات نشر کی ہیں جن میں ان کی کمپنیوں، ہوٹلوں، رہائشی فلیٹس اوران کے نام پر جاری تجارتی منصوبوں کی تفصیلات بھی شامل ہیں۔ڈونلڈ ٹرمپ اعتراف کرچکے ہیں کہ وہ اپنے نام سے جاری دنیا بھر میں مختلف منصوبوں سے 9 ملین ڈالر کی رقم حاصل کرتے ہیں۔ڈونلڈ ٹرمپ کے بیرون ملک قائم تجارتی منصوبوں اور کمپنیوں میں چین میں 9، برطانیہ میں 10، متحدہ عرب امارات میں 12، کینیڈا میں 14،انڈونیشیا اور بھارت میں 16، سعودی عرب اور برازیل میں 8، جب کہ قطر، اسرائیل، آئرلینڈ میں چار چار، مصر، جارجیا، جنوبی افریقا، یوروگوائے، ترکی، میکسیکو اور دوسرے ملکوں میں دو دو کمپنیاں کام کررہی ہیں۔

مزید : صفحہ اول