پارلیمنٹ میں جھوت بولنے والیسے قوم نجات چاہتی ہے : نثار کھوڑو

پارلیمنٹ میں جھوت بولنے والیسے قوم نجات چاہتی ہے : نثار کھوڑو

 کراچی (اسٹاف رپورٹر) پاکستان پیپلز پارٹی سندھ کے صدر نثار احمد کھوڑونے کہا ہے کہ پانامہ لیکس کا معاملہ سپریم کورٹ کے لیے بڑا امتحان ہے ،سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے پانامہ کیس کی بینچ سے خود کو علیحدہ رکھ کر سوال پیدا کردیے ہیں۔ پارلیمنٹ میں جھو ٹ بولنے والے سے قوم نجات چاہتی ہے اورسپریم کورٹ ایوان میں جھوٹ بولنے والے وزیر اعظم سے چھٹکارا دلائے ۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے پیپلز پارٹی کے ایم پی اے ڈاکٹر بہادر ڈاہری کی رہائشگاہ پر پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا اس موقع پر فنکشنل لیگ حیدرآباد ڈویژن کے جنرل سیکریٹری سردار غلام مصطفی لاشاری اور بدین کے قاضی محمد فاروق نے پیپلز پارٹی میں شمولیت کا اعلان کیا۔اس موقع پر پی پی پی سندھ کے صدر نثار احمد کھوڑو اور سعید غنی نے پارٹی میں شمولیت پر ان کا خیرمقدم کیا ۔ ایک سوال کے جواب میں نثار احمد کھوڑو نے کہا کہ پانامہ لیکس پر دال میں کالا ہے اس لیئے شریف خاندان ایک جھوٹ چھپانے کے لیے ایک سو جھوٹ بول رہے ہیں مگر وہ پھنس چکے ہیں ۔انھوں نے کہا کہ ماضی میں سپریم کورٹ پر حملہ کرنے والے عدالت کو ایک بار پھر چنے چبانے کی دھمکیاں دے رہے ہیں اور رانا ثناء اللہ اور خواجہ سعد رفیق کو یہ ہمت سپریم کورٹ نے ماضی میں کاروائی نہ کرکے خود فراہم کی ہے ۔انھوں نے کہا کہ ن لیگ کے لیے سپریم کورٹ پر دباؤ ڈالنا نئی بات نہیں ہے۔نثار احمد کھوڑو نے کہا کہ عدالت نے پیپلز پارٹی کے وزیر اعظم کو توہین عدالت کے معاملے پر تو ہٹایا گیا اب دیکھنا یہ ہے کہ شریف برادران کے متعلق سپریم کورٹ کیا فیصلہ دیتی ہے تاہم پانامہ کا فیصلہ آنے کے بعد مزید تبصرہ کیا جاسکتا ہے۔ایک سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ گورنر کی مقرری وفاقی حکومت کا کام ہے تاہم گورنر کی تقرری کے لیے پیپلز پارٹی سے نہ پہلے مشاورت کی گئی نہ اب مشاورت کی جارہی ہے ۔ انھوں نے کہا کہ وفاقی حکومت نے سندھ کو نظرانداز کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ہے تاہم سندھ اپنا حق لے کر رہے گا۔انھوں نے کہا کہ قوم چاہتی ہے کہ پارلیمنٹ میں جھوٹ بولنے والے سے چھٹکار ا ملے اور عوام کو نئے وزیر اعظم کے انتخاب کا موقع دیا جائے ۔نثار احمد کھوڑونے کہا کہ پیپلز پارٹی کے پاس چار مطالبات پر تحریک کے لیے بہت آپشن موجود ہے اور مختلف طریقوں سے مطالبات تسلیم کرانے کے لیے پریشر بڑھایا جائے گا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر