”ارے آپ سکھ کا سانس لیں۔۔“ واٹس ایپ وہ فیچر متعارف نہیں کرا رہا جس کی افواہ نے سب کی راتوں کی نیند حرام کر دی

”ارے آپ سکھ کا سانس لیں۔۔“ واٹس ایپ وہ فیچر متعارف نہیں کرا رہا جس کی افواہ ...
”ارے آپ سکھ کا سانس لیں۔۔“ واٹس ایپ وہ فیچر متعارف نہیں کرا رہا جس کی افواہ نے سب کی راتوں کی نیند حرام کر دی

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) اگر آپ واٹس ایپ استعمال کرتے ہیں اور پھر سکھ کا سانس لیں کیونکہ واٹس ایپ کا سکرین شاٹ لینے پر دوسرے شخص کو آگاہ کرنے کا فیچر صرف افواہ ہے اور اس میں کوئی حقیقت نہیں ہے۔

”کبھی کسی لیڈر کی اس طرح تلاشی نہیں ہوئی ،پہلی بار ہورہا ہے کہ سپریم کورٹ حکمرانوں کی تلاشی لے رہی ہے“عمران خان

تفصیلات کے مطابق سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی خبر میں کہا گیا تھا کہ 5 فروری سے واٹس ایپ نیا فیچر متعارف کرا رہی ہے جس کے تحت جب بھی آپ کسی کیساتھ ہونے والی بات چیت کی سکرین شاٹ لیں گے تو دوسرے شخص کو بھی اس سے آگاہ کر دیا جائے گا تاہم آپ پریشان مت ہوں اور سکھ کا سانس لیں کیونکہ یہ صرف افواہ ہے اور واٹس ایپ میں ایسا کوئی بھی فیچر متعارف نہیں کرایا جا رہا۔

حقیقت میں یہ خبر ایک ایسی ویب سائٹ کی جانب سے جاری کی گئی ہے جو واضح طور پر بتاتی ہے کہ اس کی جانب سے جاری کی جانے والی پوسٹس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہوتا اور صرف ”سنجیدہ“ سیکشن میں موجود چیزیں ہی حقیقت پر مبنی ہوتی ہیں اور خوش قسمتی سے یہ خبر ”سنجیدہ“ سیکشن میں نہیں ہے۔

دوسری بات یہ ہے کہ واٹس ایپ کی جانب سے جب بھی کوئی اپ ڈیٹ متعارف کرانے کا منصوبہ بنایا جاتا ہے یا اپ ڈیٹ متعارف کرائی جاتی ہے تو اس کا اعلان آفیشل بلاک پر کیا جاتا ہے اور مذکورہ اپ ڈیٹ سے متعلق اگر واٹس ایپ کے آفیشل بلاگ یا سماجی رابطوں کے اکاﺅنٹس کو دیکھیں تو وہاں کچھ بھی موجود نہیں ہے۔

یہاں یہ جاننا بھی ضروری ہے کہ واٹس ایپ کے مطابق ان کیلئے صارفین کی پرائیویسی سب سے زیادہ اہمیت کی حامل ہے اور اس وجہ سے بات چیت کو بھی اینکریپٹ کیا جاتا ہے یعنی کوئی بھی تیسرا شخص اس بات چت تک رسائی حاصل نہیں کر سکتا اور اگر واٹس ایپ ایسا کوئی فیچر متعارف کرا بھی دیتی ہے تو یہ اس کی اپنی پالیسی کے خلاف ہو گا۔

سلو اوور ریٹ، اظہر علی کو ایک ون ڈے میچ کیلئے معطل کر دیا گیا، میچ فیس کا 40 فیصد جرمانہ بھی عائد

ایسا صرف واٹس ایپ کے ساتھ ہی نہیں ہوا بلکہ انسٹاگرام کو بھی پہلے سال اسی طرح کی پریشانی سے دوچار ہونا پڑا تھا جب ایک افواہ میں کہا جانے لگا کہ جب کوئی شخص کسی کی تصاویر کی سکرین شاٹ لے گا تو اس کے بارے میں فوٹو اپ لوڈ کرنے والے کو آگاہ کر لیا جائے گا تاہم انسٹاگرام نے بعد ازاں اس کی تردید کی اور پھر معاملہ ختم ہوا تھا۔

مزید : سائنس اور ٹیکنالوجی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...