بھارت کا یوم جمہوریہ ، پاکستان ، کشمیر سمیت دنیا بھر میں یوم سیاہ منایا گیا ، احتجاج، ریلیاں ، مقبوضہ وادی کرفیو قابض فوج کے ہاتھوں مزید 2کشمیری شہید

بھارت کا یوم جمہوریہ ، پاکستان ، کشمیر سمیت دنیا بھر میں یوم سیاہ منایا گیا ، ...

لاہور،میرپور،برسلز،سرینگر(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)بھارت کے یوم جمہوریہ کے موقع پر پاکستان ،آزاد اور مقبوضہ جموں وکشمیر سمیت دنیا بھر میں موجود کشمیری شہریوں نے یوم سیاہ منایا،اس موقع ہر احتجاجی مظاہروں اور ریلیوں کا انعقادکیاگیا،یوم سیاہ کی کال پر مقبوضہ وادی میں مکمل ہڑتال اور تمام تعلیمی ادارے، کاروباری مراکز اور ٹرانسپورٹ بند رہی ،بھارت مخالف مظاہرے اور ریلیاں بھی نکالی گئیں ،گھر گھر سیاہ پرچم لہرا دئیے گئے،بھارتی فوج نے کرفیو نافذ کرکے مقبوضہ وادی کو چھاؤنی میں تبدیل کردیا۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم آزاد کشمیر راجہ محمدفاروق حیدر خان اور مقبوضہ جموں وکشمیرکی آل پارٹیز حریت کانفرنس کی اپیل پر ہفتہ کو ہندوستانی یوم جمہوریہ کو ریاست جموں وکشمیر کے دونوں حصوں اور دنیا بھرمیں ’’یوم سیاہ‘‘ کے طور پر منایا ۔ اس سلسلہ میں میرپور میں کشمیر سینٹر میرپور (جموں وکشمیر لبریشن سیل) اور قومی تقریبات کمیٹی میرپور کے زیر اہتمام احتجاجی ریلی کا انعقاد کیا گیا ۔ریلی ضلع کچہری میرپور سے شروع ہو کر چوک شہداں میرپورپہنچی ۔ احتجاجی ریلی میں بھارت سے نفرت کے اظہار کے لئے سیاہ غبارے فضا میں چھوڑے گئے جن پر تحریر تھا ’’ ہندوستان کا یوم جمہوریہ ، کشمیریوں کا یوم سیاہ‘‘ ۔ ریلی کے شرکا ء نے سیاہ جھنڈے ، پلے کارڈز ، بینرز اٹھا رکھے تھے اور بازوٗں پر سیاہ پٹیاں باندھ رکھی تھیں۔پلے کارٖڈز اور بینرز میں ہندوستانی جارحیت اور مقبوضہ جموں کشمیر پر غاصبانہ قبضے اور کشمیریوں کے حق خودارادیت کے حق میں نعرے درج تھے۔ ریلی کے شرکاء ہندوستان مردہ باد ، ون سلوگن ، ون ٹریک ، گو انڈیا ، گو بیک کے نعرے لگاتے ہوئے چوک شہداں پہنچے جہاں احتجاجی جلسہ کی شکل اختیار کر گیا۔ ڈائریکٹر جنرل جموں وکشمیر لبریشن سیل فدا حسین کیانی نے ریلی میں قراردادیں پیش کیں۔دوسری طرف کشمیرکونسل یورپی یونین نے ہفتہ کو بھارت کے یوم جمہوریہ کو یوم سیاہ کے طورپر مناتے ہوئے بھارتی سفارتخانے کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مظاہرے کی قیادت چیئرمین کشمیرکونسل یورپی یونین علی رضا سید نے کی۔ اس موقع پر بھارتی سفارت خانے کوایک یاداشت بھی پیش کی گئی جس میں بھارت سے کشمیریوں پر مظالم بندکرنے اوران کو حق خودارادیت دینے کا مطالبہ کیا گیاہے۔ شدیدبارش اور سخت سردی کے باجود بڑی تعداد میں کشمیریوں اور ان کے ہمدردوں نے مظاہرے میں شرکت کی۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈز اٹھارکھے تھے جن پرکشمیریوں کے حق میں اوربھارت کے خلاف نعرے درج تھے۔ ادھر بھارت کے یوم جمہوریہ کے موقع پر مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی ریاستی دہشت گردی اور بربریت سے مزید 2کشمیری شہید ہوگئے،حریت رہنما ؤ ں کی جانب سے یوم سیاہ کی کال پر مقبوضہ وادی میں مکمل ہڑتال اور تمام تعلیمی ادارے، کاروباری مراکز اور ٹرانسپورٹ بند رہی ،بھارت مخالف مظاہرے اور ریلیاں نکالی گئیں ،گھر گھر سیاہ پرچم لہرا دیے گئے،بھارتی فوج نے کرفیو نافذ کرکے وادی کو چھانی میں تبدیل کردیا۔کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں سری نگر کے علاقے خونموہ میں بھارتی فورسز نے ایک بار پھر بربریت اورجارحیت کا مظاہرہ کرتے ہوئے سرچ آپریشن کے دوران فائرنگ سے مزید 2 کشمیر ی نوجوانوں کو شہید کردیا۔

یوم سیاہ

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر ) وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوج کشمیریوں کو آج بھی اپنی سفاکیت کا نشانہ بنارہی ہے، کشمیریوں کے حق میں سیکیورٹی کونسل کی قراردادیں موجود ہیں جن پر عملدرآمد ہونا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کشمیریوں سے حق آزادی چھیننے اور نہتے کشمیریوں کے خون سے ہاتھ رنگنے والا بھارت کس منہ سے یوم جمہوریہ کی بات کرتا ہے؟ ۔وفاقی وزیرامورکشمیرعلی امین گنڈاپور نے کہا کہ کشمیریوں کے خون سے ہاتھ رنگ کے بھارت کا یوم جمہوریہ منانا شرمناک ہے،بھارت نے مقبوضہ کشمیر کوفوجی چھانی میں تبدیل کر رکھا ہے، مقبوضہ کشمیرکی آبادی تبدیل کرنے کی مذموم کوشش ہورہی ہے۔

مزید : صفحہ اول