فوڈ اتھارٹی کے گوالوں کی گاڑیوں پر چھاپے ، 4ہزار 915لٹر ناقص دودھ تلف

فوڈ اتھارٹی کے گوالوں کی گاڑیوں پر چھاپے ، 4ہزار 915لٹر ناقص دودھ تلف

لاہور (جنرل رپورٹر)ڈائریکٹر جنرل پنجاب فوڈ اتھارٹی کیپٹن (ر) محمد عثمان کی ہدایت پر ڈیری سیفٹی ٹیموں نے پنجاب بھر میں علی الصبح ناکہ بندی کر تے ہوئے دودھ لے جانیوالی گاڑیوں کی چیکنگ کی ۔2013 گاڑیوں میں موجود 2 لاکھ 85 ہزار 29 لیٹر دودھ کے موقع پر ٹیسٹ کے دوران4 ہزار 915 لیٹر دودھ میں مضر صحت اجزاء کی ملاوٹ پر ضائع کر دیا گیا ۔ دودھ میں ملاوٹ کے خاتمے کا واحد حل پاسچرائزیشن قانون کو لاگو کرنا ہے ۔ڈی جی فوڈ اتھارٹی کیپٹن (ر) محمد عثمان کا کہنا تھا کہ دور دراز علاقوں میں جعلی دود ھ تیا ر کر کے شہروں میں سپلائی کے لیے لایا جا رہا تھا۔ دودھ میں مقدار اور گاڑھاپن بڑھانے والے پاؤڈر، یوریا اور فارملین کی ملاوٹ پائی گئی۔ملاوٹی دودھ کا استعمال جسمانی نشوونما کی بجائے متعدد بیماریوں کی وجہ بنتا ہے ۔ دودھ میں ملاوٹ کے خاتمے کا واحد حل پاسچرائزیشن قانون کو لاگو کرنا ہے۔پاسچرائزشن قانون پر 2022 سے عمل کروانے کے لیے عملی تیاری جاری ہے۔کیپٹن(ر)محمد عثمان کا مزید کہنا تھا کہ جعلی دودھ کی سپلائی کے خلاف دوردراز کے علاقوں میں بھی آپریشن کیے جا رہے ہیں۔عوام سے گزارش ہے کہ صحت دشمن عناصر کی نشاندہی کریں اور اپنے اردگرد کڑی نظر رکھیں۔ ملاوٹ کرنے والوں کی اطلاع فیس بک پیج یاپنجاب فوڈ اتھارٹی ٹول فری نمبر 0800۔80500 پر دیں۔ملاوٹ مافیا کی نشاندہی کرنے والوں کا نام صیغہ راز میں رکھا جائے گا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1