سی پیک پر امریکی تنقید،پاکستان کا ردعمل درست و حوصلہ افزاء، اکانومی واچ

    سی پیک پر امریکی تنقید،پاکستان کا ردعمل درست و حوصلہ افزاء، اکانومی واچ

  



کراچی(این این آئی)پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا ہے سی پیک پر امریکی تنقید کے بعد پاکستان کا ردعمل درست حوصلہ افزاء اور ملکی مفادات کے عین مطابق ہے۔ امریکی مفادات کے لئے اس اہم منصوبے سے دستبرداری کا آپشن موجود نہیں ہے۔امریکی مخالفت صرف بیانات تک محدود نہیں رہے گی بلکہ ہر ممکن طریقہ اختیار کیا جائے گا جس کے لئے پاکستان اور چین کو تیار رہنا ہو گا۔ سی پیک کے خلاف امریکی بیان اس وقت سامنے آیا ہے جب امریکی صدر ورلڈ اکنامک فورم کے دوران فرما رہے تھے کہ پاکستان اور امریکہ کبھی اتنے قریب نہیں رہے جتنا کہ اب ہیں جو منافقت کی اعلیٰ مثال ہے۔ ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا ہے کہ امریکی خواہشات پر ملکی مفادات قربان کرنا ناممکن ہے چین سے تعلقات میں سردمہری بھی خارج از امکان ہے اور گوادر کو کسی قیمت پر امریکہ کے حوالے نہیں کیا جا سکتا ہے۔چین اور پاکستان نے گزشتہ کئی دہائیوں سے ایک دوسرے کے بہت مدد کی ہے اور سی پیک بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے جس سے پاکستانی معیشت کو فائدہ ہو گا جبکہ چین کے لئے بین الاقوامی تجارت آسان ہو جائے گی جس سے اس کا عالمی اثر رسوخ بھی بڑھے گا جو امریکہ کو کسی صورت منظور نہیں۔ اسی لئے پاکستان کے خلاف ایف اے ٹی ایف سمیت مختلف حربے استعمال کئے جا رہے ہیں۔کرپشن منشیات فروشی اور دہشت گردی سے حاصل ہونے والے سرمائے کی بڑی مقدار امریکہ اور برطانیہ میں محفوظ رکھی جاتی ہے مگر ایف اے ٹی ایف کے ماہرین کو وہ کبھی نظر نہیں آئے گا۔امریکہ سے پاکستان کو ملنے والی امداد اور قرضوں کا بڑا حصہ مختلف حیلے بہانوں سے واپس امریکہ چلا جاتا ہے جبکہ چین کبھی ایسا نہیں کرتا۔مغربی ممالک چینی اکنامک ماڈل کے ہاتھوں استحصال پر مبنی فری مارکیٹ سسٹم کے خاتمے سے خوفزدہ ہیں جسکی وجہ سے وہ سی پیک کی مخالفت کر رہے ہیں۔فری مارکیٹ اکانومی کے ظالمانہ نظام کی وجہ سے دنیا میں غربت بے چینی اور تنازعات بڑھ رہے ہیں جبکہ پے درپے بحران معمول بن چکے ہیں۔اس نظام کی وجہ سے اس وقت صرف آٹھ افراد کے پاس دنیا کی آدھی آبادی سے زیادہ سرمایہ ہے۔کیپیٹل ازم کا ناکام نظام مغربی ممالک میں بھی اپنی ساکھ کھو چکا ہے مگر با اثر ممالک اسے بہتر بنانے کے بجائے موجودہ صورت میں قائم رکھنے کے لئے ایڑھی چوٹی کا زور لگا رہے ہیں جس میں انکی کامیاب مشکل ہے۔

اکانومی واچ

مزید : صفحہ آخر