بھارتی یوم جمہوریہ، پاکستان، کشمیر، بنگلہ دیش سمیت دنیا بھر میں یوم سیاہ، احتجاجی مظاہرے، ریلیاں

    بھارتی یوم جمہوریہ، پاکستان، کشمیر، بنگلہ دیش سمیت دنیا بھر میں یوم ...

  

سرینگر، اسلام آباد،مظفرآباد، ڈھاکہ،پیرس،گواہاٹی (نیوزایجنسیاں)مقبوضہ کشمیر سمیت دنیا بھر میں کشمیریوں نے بھارت کا یوم جمہوریہ یوم سیاہ کے طور پر منایا، وادی میں بھارت مخالف ریلیاں نکالی جا رہی ہیں، حریت رہنماؤں کا کہنا ہے کہ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے دعویدار بھارت کی جمہوریت مقبوضہ کشمیرمیں بری طرح بے نقاب ہو گئی، امریکی معاون نائب وزیرخارجہ نے بھی وادی کے حالات پر تحفظات کا اظہار کر دیا۔جموں و کشمیر پر غاصبانہ قبضے کیخلاف کشمیری بھارت کا مکروہ چہرہ دنیا کو دکھانے کیلئے سراپا احتجاج ہیں۔حریت رہنما سیدعلی گیلانی کا کہنا ہے کہ بھارتی فوج کے قتل عام نے بھارتی جمہوریت کے حقیقی چہرے کوبے نقاب کر دیا۔ سب سے بڑی جمہوریت کے دعوے دار ملک نے جمہوری آواز کا گلا دبا رکھا ہے۔ دیگرکشمیری رہنماؤں نے بھی اپنے پیغام میں کہا ہے کہ ایک طرف تو بھارت اپنا یوم جمہوریہ مناتا ہے،بھارت کے یوم جمہوریہ پر بھارتی سفارتخانے کے باہر کشمیریوں نے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ بھارت مخالف بینرز اٹھائے مظاہرین کی کشمیریوں پر بھارتی مظالم کی مذمت کی گئی۔ مظاہرین نے کہاکہ بھارت کو یوم جمہوریہ منانے کا حق نہیں، کشمیر میں بھارتی مظالم بھارتی جمہوریت کے منہ پر طمانچہ ہے۔مظاہرے کا اہتمام حریت کانفرنس آزاد کشمیر نے کیا۔ریاست جموں وکشمیر کے دونوں اطراف اور دنیا بھر میں آباد کشمیریوں نے ہندوستان کے یوم جمہوریہ کو یوم سیاہ کے طور پر منا یا۔ اس حوالہ سے آزادکشمیر بھر میں احتجاجی مظاہرے، جلسے جلوس اور ریلیاں نکالی گئیں۔ آزادکشمیر کے دارالحکومت مظفرآباد میں بھی جموں وکشمیر لبریشن سیل اور پاسبان حریت جموں وکشمیر کے زیر اہتمام ایک احتجاجی ریلی نکالی گئی، سیاہ غبارے بیی ہوا میں چھوڑے گئے۔ احتجاجی ریلی برھان مظفروانی شہید چوک سے شروع ہو کرافضل گورو چوک پر اختتام پذیر ہوئی۔قائدین نے اقوام متحدہ کے مبصرین کو یاداشت بھی پیش کی۔ بنگلہ دیش کے شہر ڈھاکہ میں ہندوستانی یوم جمہوریہ کی مناسبت سے بھارت مخالف احتجاج کیا گیا۔ڈھاکہ سمیت بنگلہ دیش کے اہم اور نمایاں عوامی مقامات پر بھارتی ظلم و بربریت کے پوسٹر آویزاں کئے گئے،پوسٹرز میں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی قابض افواج کے مظالم کی مذمت کی گئی،پوسٹرز میں انسانی حقوق کی پامالیوں کے حوالے اور بھارتی شہری ترمیمی ایکٹ، این آر سی اور بے گناہ بنگلہ دیشی شہریوں کی سرحدی ہلاکتوں کے خلاف شدید احتجاج کیا گیا۔بھارت کا یوم جمہوریہ فرانس میں کشمیریوں اور پاکستانیوں نے یوم سیاہ کے طور پر منایا۔ پیرس میں ریلی،پیرس کی گلیاں اور شاہراہیں مودی مردہ باد انڈیا مردہ کے نعروں سے گوج اٹھا۔تفصیل کے مطابق بھارت کے اکہترویں ہوم جمہوریہ کے دن کشمیریوں سکھوں اور دوسری انڈین منیارٹی تنظیموں نے یوم سیاہ کے طور پر منایا۔بھارت کے خلاف دنیا کے بیشتر ممالک میں انڈیا کا یوم سیاہ منایا گیا۔پیرس میں پاکستانی۔کشمیری اور سکھ کیمونٹی نیبھارت کے خلاف ایک ریلی کا اہتمام کیا،ریلی گار دی ایسٹ سے شروع ہوئی اور ریپبلک کے مقام تک پہنچی۔دوسری طرف بھارت کے یوم جمہوریہ پر ریاست آسام یکے بعد دیگرے ہونے والے چار زوردار دھماکوں سے گونج اْٹھا۔ ریاست آسام کے ضلع دیبر گڑھ میں 3 اور ضلع چاریڈیو میں ایک زور دار دھماکا ہوا۔یہ دھماکے گْورودارہ اور ایک بازار سمیت عوامی مقامات پر ہوئے تاہم دھماکوں میں کسی قسم کا جانی نقصان نہیں ہوا۔ گوردوارہ کی عمارت کو نقصان پہنچا اور عام تعطیل ہونے کی وجہ سے بازار بھی خالی تھا۔ادھرپولیس نے گرنیڈ دھماکوں کی ذمہ داری علیحدگی پسند عسکری تنظیم الفا پر ڈالتے ہوئے کہاہے کہ اس تنظیم نے بھارت کے یوم جمہوریہ کو یوم سیاہ کے طور پر منانے کا اعلان کیا تھا، دھماکے اسی تناظر میں کیے گئے ہیں تاکہ لوگوں میں خوف و ہراس پھیل جائے۔

یوم سیاہ

مزید :

صفحہ اول -