سینیٹ مزید شہادتوں میں رکاوٹ ڈالنے میں کامیاب ہو گیا تب بھی ٹرمپ کو معافی نہیں ملے گی

  سینیٹ مزید شہادتوں میں رکاوٹ ڈالنے میں کامیاب ہو گیا تب بھی ٹرمپ کو معافی ...

  



واشنگٹن(اظہر زمان، بیوروچیف) ڈیموکریٹک پارٹی کی طرف سے ٹرمپ کی مواخذہ ٹیم کے سربراہ اور ایوان نمائندگان کی انٹیلی جنس کمیٹی کے چیئرمین ایڈم شیف نے کہاہے کہ اگر سینیٹ ٹرمپ مواخذے کے مقدمے میں مزید شہادتوں میں رکاوٹ ڈالنے میں کامیاب ہو جائے تب بھی ٹرمپ کو معافی نہیں ملے گی۔ انہوں نے یہ تبصرہ این بی سی نیوز کے ساتھ ایک انٹرویو میں اتوار کے روز کیا جب سینیٹ میں صدر ٹرمپ کے خلاف مواخذے کے مقدمے میں تعطیل ہے۔ منظور شدہ ضوابط کے مطابق استغاثہ ٹیم کے مینیجرز نے تین دن کی مخصوص مدت میں اپنے دلائل جمعہ کو مکمل کر لئے تھے جس کے بعد وائٹ ہاؤس کی دفاعی قانونی ٹیم نے ہفتے کے روز جوابی دلائل کا آغاز کیا۔ اتوار کے وقفے کے بعد وہ پیر اور منگل کے مزید دو دنوں میں اپنے موقف کا اظہار مکمل کرلیں گے۔ صدر ٹرمپ پر دو الزامات کے تحت مقدمہ چل رہاہے جن میں اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال اور پھر بعد میں اس سلسلے میں کانگریس کی طرف سے کی جانے والی تفتیش میں رکاوٹ ڈالنا شامل ہے۔ ایڈم شیف نے اس خصوصی انٹرویو میں بتایا کہ اگر ملک کو ایک منصفانہ مقدمے سے محروم کر بھی دیا گیا تو پھر بھی قوم صدر ٹرمپ کو معاف نہیں کرے گی۔ امریکیوں کو پتہ چل جائے گا کہ ملک کو وہ نہیں ملا جو ریاست کے بانیوں نے سوچا تھا۔ وائٹ ہاؤس کی دفاعی ٹیم نے ڈیموکریٹک مینجرز کے دلائل کا جواب دیتے ہوئے کہا تھا کہ وہ دراصل 2020ء کے صدارتی انتخابات میں مداخلت کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور انہوں نے یہ ثابت کرنے کی کوشش بھی کی ایوان نمائندگان کے مواخذے کے تفتیش کاروں کو کسی گواہ نے یہ نہیں بتایا کہ صدر ٹرمپ سیاسی حمایت کے بدلے میں امداد دینے کے معاملے سے منسلک پائے گئے ہیں تاہم قبل ازیں سینیٹ میں اپنے دلائل کا آغاز کرتے ہئے ڈیموکریٹک مینجرز نے یہی موقف اختیار کیا تھا کہ سینیٹ میں مزید دستاویزات اور شہادتوں کو پیش کیا جانا چاہئے جن میں وائٹ ہاؤس کے سابق سکیورٹی ایڈوائزر جان بولٹن اور موجودہ قائم مقام چیف آف سٹاف مک ملوانی شامل ہیں ان کا کہنا ہے کہ ایسی شہادتوں سے الزامات کا صحیح ثبوت فراہم و گا لیکن سرکاری ٹیم اس سے گریز کر رہی ہے۔ ایڈم شیف نے اپنے انٹرویو میں مزید کہا کہ ری پبلکن ارکان کو چاہئے کہ وہ صدر ٹرمپ کے بارے میں پوری آزادی اور غیر جانبداری کے ساتھ اپنی رائے کا اظہارکریں۔ انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ صدر ٹرمپ بہت کینہ پرور ہیں جو اپنی مخالفت کسی صورت برداشت نہیں کرتے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ہم سینیٹ کے ارکان کو مقدمے میں مزید گواہ بلانے کیلئے رضامند نہ کر سکے تو ثابت ہو جائے گا کہ اس کام کیلئے کتنی زیادہ اخلاقی جرأت کی ضرورت ہے۔

مزید : صفحہ اول