سودی نظام سے ملک کبھی ترقی نہیں کرسکتا،محمدحسین محنتی

سودی نظام سے ملک کبھی ترقی نہیں کرسکتا،محمدحسین محنتی

  



میرپورخاص (بیورورپورٹ)جماعت اسلامی سندھ کے امیر و سابق ایم این اے محمد حسین محنتی نے کہا ہے کہ جب تک ملک میں سودی اور طاغوت کا نظام نافذ ہوگا ملک کی ترقی اور عوام کے مسائل حل نہیں ہوسکتے،حکمرانوں کی نااہلی اور بددیانتی کی وجہ سے آج روٹی، چینی،گھی غائب،تبدیلی عوام پر عذاب بن کر نازل ہوئی ہے، جب تک ملک میں ابلیسی نظام نافذ ہے عوامی مسائل اور ملک کی ترقی ناممکن ہے، حکمران خود اس بات کی گواہی دے رہے ہیں کہ قوم آئی ایم ایف سے وصول کردہ چھ ارب ڈالر کی سزا بھگت رہی ہے،جب تک ملک میں سودی اور طاغوت کا نظام نافذ ہوگا ملکی ترقی اور عوام کے مسائل حل ہونا ناممکن ہے،جماعت اسلامی کا واحد مقصد اللہ کی زمین پر اللہ کا نظام نافذ کرنا ہے جس کیلئے ہم روز اول سے جدوجہد کررہے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جماعت اسلامی ضلع ٹنڈومحمد خان کے تحت راجونظامانی مقام پر کارکنان کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر مقامی امیر عامر منصوری، رئیس غلام قادر نظامانی،عبیداللہ نظامانی اور دیگر ذمہ داران بھی موجود تھے۔محمد حسین محنتی نے مزید کہا کہ حکومت میں جو لوگ بیٹھے ہیں،پولیس،بیوروکریسی سمیت ہر جگہ پر موجود طاقتور لوگ دین سے لاتعلق ہیں اور طاغوتی نظام کو نافذ کرنے میں مددگار ہیں۔آٹے، چینی،ٹماٹر سمیت بحران در بحران میں حکومتی وزراء اور سیاسی لوگ ملوث ہیں جس کی رپورٹ میڈیا میں آچکی ہے، تبدیلی اور مدینے کی ریاست کی دعویدار حکومت مکمل طور پر ناکام اور ان کے تمام وعدے جھوٹ کا پلندہ ثابت ہوچکے ہیں۔ آج روٹی، چینی غائب ہوگئی ہے زرعی اور گندم پیدا کرنے والا پانچواں بڑا ملک ہونے کے باوجود آج آٹے کیلئے پوری قوم قطار میں لگی ہوئی ہے جو سودی نظام معیشت اور آئی ایم ایف کے احکامات پر عمل کرنے کا نتیجہ ہے، موجودہ حکمرانوں کی نااہلی اور بدترین کارکردگی کی وجہ سے آج پوری قوم مہنگائی،بیروزگاری،مفلسی اور بھوک بدحالی کا شکار ہوچکی ہے،حکمرانوں کا کام محض عوام پر ٹیکس عائد کرنا نہیں بلکہ ان کی خدمت کرنا ہے لیکن موجودہ حکمرانوں نے بجلی،گیس، پیٹرول سمیت اشیائے خوردونوش پر بھاری ٹیکس عائد کرکے عوام کی زندگی اجیرن کردی ہے۔

مزید : صفحہ اول