ملتان: کرونا سے 3ہلاکتیں، نشتر آئسو لیشن وارڈ میں مریضوں کے غیر ضروری داخلے پر پابندی 

      ملتان: کرونا سے 3ہلاکتیں، نشتر آئسو لیشن وارڈ میں مریضوں کے غیر ضروری ...

  

ملتان‘ ٹھٹھہ صادق آباد‘ رحیم یار خان (وقائع نگار‘ نامہ نگار‘ بیورو رپورٹ) نشتر ہسپتال ملتان میں گزشتہ چوبیس گھنٹوں (بقیہ نمبر59صفحہ 7پر)

کے دوران کورونا میں مبتلا 3 مزید مریض جاں بحق ہوگئی‘ اموات کی مجموعی  تعداد 418 ہو گئی زیر علاج کورونا کے مریضوں کی  تعداد 24ہو گئی،19مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔ تفصیل کے مطابق فوکل پرسن نشتر ہسپتال ڈاکٹر عرفان ارشد کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ نشتر ہسپتال کے آئی سو لیشن وارڈز میں زیر علاج ملتان کے رہائشی 60 سالہ ملک نذیر 54 سالہ نسرین بی بی اور 65 سالہ غلام حیدر  نے دم توڑ دیا یوں یکم اپریل 2020  سے چھبیس جنوری 2021  کے درمیان کورونا کے باعث ہونے والی اموات کی مجموعی تعداد 418 ہو گئی ہے،جبکہ نشتر ہسپتال میں زیر علاج کورونا کہ مریضوں کی تعداد 24 ہو گئی ہے جن میں سے 19 مریضوں کا تعلق ملتان سے ہے جبکہ زیر علاج  19مریضوں  کی حالت تشویشناک ہے اور 04 مریضوں کا وینٹی لیٹر پر منتقل کر کے علاج جاری ہے،جبکہ کورونا کے شبہ میں 29 مریض زیر علاج ہیں جن کی رپورٹس کا انتظار  ہے،ادھر رواں سال نشتر ہسپتال میں کورونا کے شبہ میں 3 ہزار 920 افراد رپورٹ ہوئے جن میں سے 1 ہزار 476 افراد میں کورونا کی تصدیق ہوئی ہے۔ نشتر میڈیکل کالج کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر افتخار حسین خان نے کورونا آئسولیشن وارڈ میں مریضوں کے غیر ضروری داخلے پر پابندی لگا دی ہے۔اور اس ضمن میں مراسلہ جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ نشتر انتظامیہ کے نوٹس میں آیا ہے کورونا آئسولیشن وارڈ میں کئی مریضوں کو صرف کورونا ٹسٹ کی غرض سے داخل کیا جاتا ہے حالانکہ ان کے داخلے کی قطعی ضرورت نہیں ہوتی۔لہذا اس عمل کو روکا جائے۔آئندہ صرف وہی مریض داخل کئے جائیں جن میں کورونا وائرس کی علامات موجود ہوں۔اگر کسی ڈاکٹر نے صرف کورونا ٹسٹ کی غرض سے مریض کو داخل کیا تواس کے خلاف انکوائری کی جائے گی۔تاہم اس مراسلے کے جاری ہونے پر طبی حلقوں نے پرنسپل کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے اور کہا ہیکہ اب ایک سرجن(پرنسپل)فیصلہ کرے گا کہ کورونا وارڈ میں کون سا مریض داخلے کے لئے اہل ہے یا نہیں اس غلط فیصلے کی وجہ سیصرف اور صرف مریضوں کا نقصان ہوگا۔ کرونا وائرس کا شکار ہونے والے سابق چیرمین یونین کونسل چک نمبر 136 چوہدری عمران اشرف اور ان کی اہلیہ مکمل صحت یاب ہوگئے، سابق چیرمین یونین کونسل چک نمبر 136 دس آر چوہدری عمران اشرف اور ان کی اہلیہ گزشتہ دنوں کرونا وائرس کا شکار ہوگئے تھے جنہوں نے خود کو گھر میں قرنطینہ کرلیا تھا، چوہدری عمران اشرف اور ان کی اہلیہ اب مکمل صحت یاب ہو گئے ہیں ان کا دوبارہ کرونا ٹیسٹ نیگٹو آگیا ہے۔ ضلع رحیم یارخان میں کورونا کے وار جاری ایک ہی روز میں دو لیڈی ڈاکٹروں ٹیچرطالبات اور17خواتین سمیت 33افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوگئی۔ ضلع رحیم یارخان میں کورونا وائرس ایک مرتبہ پھر سے تیزی سے پھیلنے لگا۔ایک ہی روز میں 33افراد جن میں 2لیڈی ڈاکٹروں سکول ٹیچر اور طالبات اور خواتین سمیت 33افراد کو شیخ زاید ہسپتال لایا گیا جن میں جدہ ٹان کی 39سالہ لیڈی ڈاکٹر امبر عباسچرچ روڈ کی36سالہ ڈاکٹر نازیہ حنیفشیخ خلیفہ پبلک سکول کی36سالہ مس مہرین اشفاقجدہ ٹان کی 13سالہ ترنم نایابجناح ٹان کی 15حمنہ شفیقرحیم یارخان کی 15سالہ لائبہجناح پارک کا 14سالہ منیب حسینماڈل ٹان کا 22سالہ بلال اسلمشاہ زمان سٹریٹ کا 21سالہ عبدالحناناڈا گلمرگ کا 22سالہ لقمان2سالہ موسی عدنانایمان ٹان کی 30سالہ عظمی رضوانمحلہ سادات کا 20سالہ عبداللہنیازی روڈ کی 35سالہ سونیا مہرینگلشن عثمان کی 33سالہ عاصمہ شجیلشاہد پارک کا عبدالواحد آفیسر کالونی کی زاہدہ وہابعلامہ اقبال ٹان کا مبین سعیدسیٹلائیٹ ٹان کا شاہ میرگلشن عثمان کا احمدظاہر پیر کی عظیم خاتونلیا قت پور کی روبینہ حسناڈاگلمرگ کی شہناز اخترمسلم کالونی کی نذیراں امان گڑھ کی سامیہ پروینجدہ ٹان کا وسیم اختربزنس مین کالونی کا امان ماڈل ٹان کا یاسر جاویدچک169پی کا غلام فریدمین بازار کی فرحت پروینفاضل پور کی سکینہحسن کالونی کا غلام مصطفی اور رحیم یارخان کا بخشاخان شامل ہیں جن کے سوائپ حاصل کرنے کے بعد ڈاکٹر ز نے ان میں وائرس کی تصدیق کردی۔ضلعی انتظامیہ اور محکمہ صحت نے متاثرہ مریضوں کو حکومتی ایس او پیز کے تحت کے گھروں میں آئسولیٹ کردیامحکمہ صحت سے جاری ہونے والے اعداد شمار کے مطابق ضلع رحیم یارخان میں 16کورونا وائرس کے مریض مرض کو شکست دینے کے بعد صحت یاب ہوگئے جبکہ ضلع رحیم یارخان میں کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کی مجموعی تعداد2005تک پہنچ چکی ہے۔ کورونا وبا کے دوران بے مثال کارکردگی دکھانے پر پاکستان بیت المال کے منیجنگ ڈائریکٹر عون عباس بپی  کی جانب سے نشتر ہسپتال کے کورونا آئی سو لیشن وارڈ کے انچارج ڈاکٹر معظم کے لئے میڈل اور گلدستہ بھجوایا گیا،کورونا وبا کی پہلی لہر کے دوران خود کورونا میں مبتلا ہونے والے اور بعدازاں صحت یابی کے بعد دوبارہ آئی سو لیشن انچارج کے طور پر ذمہ داری سنبھالنے والے نشتر ہسپتال آئی سو لیشن وارڈ کے انچارج ڈاکٹر معظم کی خصوصی تعریف کرتے ہوئے پاکستان بیت المال کے ایم ڈی عون عباس بپی نے تعریفی پیغام بھی پہنچایا،ادھر ڈاکٹر معظم کا کہنا تھا کہ مسیحائی ایسا مقدس پیشہ ہے کہ اس میں اپنی جان کی پرواہ کئے بغیر دوسروں کی جان بچانا زیادہ اہمیت کا حامل ہوتا ہے اسی نظریے کے پیش نظر دوبارہ کورونا وارڈ میں دوبارہ زمہ داریاں سنبھالی ہیں۔

کرونا

مزید :

ملتان صفحہ آخر -