دہشتگرد کا جیل ٹرائل ملتان سے لاہور منتقل کرنے کی درخواست مسترد

دہشتگرد کا جیل ٹرائل ملتان سے لاہور منتقل کرنے کی درخواست مسترد

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے کالعدم تنظیم کے مبینہ دہشت گرد قاری رحمت اللہ کا جیل ٹرائل ملتان سے لاہور منتقل کرنے کی درخواست مسترد کر دی ،چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس سید منصور علی شاہ نے قاری رحمت اللہ کی ٹرائل منتقلی کی درخواست پر سماعت کی،د رخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ محکمہ انسداد دہشت گردی نے قاری رحمت اللہ کے خلاف مختلف مقدمات درج کر رکھے ہیں جن کے خلاف لاہور کی انسداد دہشت گردی عدالت میں ٹرائل جاری تھا تاہم لاہور ہائیکورٹ انسداددہشت گردی عدالت کو ٹرائل کرنے اور فیصلہ کرنے سے روک رکھا ہے، انہوں نے بتایا کہ دوسری طرف ملتان جیل میں انسداد دہشت گردی عدالت نے ملزم کے خلاف ہینڈ گرنیڈ اور دیگر بارودی مواد رکھنے کے مقدمہ میں ٹرائل شروع کر رکھا ہے، ملزم کی اہلیہ ایک شیر خوار بچے کی ماں ہے اور اسے ٹرائل کی پیروی میں لاہور سے ملتان جانا پڑتا ہے لہذا ملتان کا جیل ٹرائل لاہور منتقل کیا جائے، محکمہ پراسکیوشن کی طرف سے ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل عبدالصمد پیش ہوئے اور ملزم کیخلاف مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی رپورٹ عدالت میں پیش کی، ایڈیشنل پراسکیوٹر نے موقف اختیار کیا کہ ملتان جیل ٹرائل میں ملزم کے خلاف چار گواہوں کے بیانات ریکارڈ ہو چکے ہیں اور دو گواہوں کے بیانات ریکارڈ ہونا باقی ہیں، ملزم کو مشترکہ تحقیقات ٹیم کالعدم تنظیم سپاہ صحابہ لدھیانوی گروپ کا دہشت گرد قرار دے چکی ہے، ملزم ٹرائل کور لاہور منتقل کروا کر ہائیکورٹ کے حکم امتناعی کی آڑ میں رکوانا چاہتا ہے، ٹرائل میں کوئی تاخیر نہیں ہو رہی ہے، ٹرائل لاہور منتقل کیا گیا تو ٹرائل کورٹ نئے سرے سے گواہوں کے بیانات اور شہادتیں دیکھنا پڑیں جس سے ٹرائل تاخیر کا شکار ہو گا، ملزم کی اہلیہ نے شیر خوار بچے سمیت روسٹرم پر آکر موقف اختیار کیا کہ سی ٹی ڈی نے جھوٹا مقدمہ درج کیا ہے، ٹرائل کی پیروی میں اسے بچے سمیت ملتان جانا پڑتا ہے لہذا جیل ٹرائل لاہور منتقل کیا جائے ، عدالت نے ملزم کی اہلیہ کو روسٹرم پر لانے پر وکیل پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ ایسی روایت نہیں ہونی چاہیے کہ ملزموں کی خواتین بچوں سمیت روسٹرم پر آکر کیس پر اثرانداز ہونے کی کوشش کریں، اگر ایسی روایت پڑ گئی تو ہر ملزم اپنی بیوی اور بچوں کو آگے کر کے مقدمات پر اثر انداز ہوا کرے گا، عدالت نے تفصیلی دلائل سننے کے بعد مبینہ دہشت گرد کا جیل ٹرائل ملتان سے لاہور منتقل کرنے کی درخواست مسترد کردی۔

مزید :

صفحہ آخر -