ڈگر ہسپتال میں عوام طبی سہولیات سے محروم ،نجی میڈیکل سنٹرز کی بھر مار

ڈگر ہسپتال میں عوام طبی سہولیات سے محروم ،نجی میڈیکل سنٹرز کی بھر مار

  

بونیر (ڈسٹرکٹ رپورٹر )ضلع کونسل بونیر کے اراکین نے ہیڈ کوارٹر ہسپتال ،محکمہ تعلیم ،محکمہ صحت سمیت تمام محکموں کے کارکردگی پر تنقید کرتے ہوئے کہاہے کہ بونیر میں محکمہ صحت کی ناکامی اور ہیڈ کوارٹرہسپتال ڈگر میں عوام کو ریلیف نہ ملنے کی وجہ سے ائے روز پورے بونیر خصوصا ہیڈ کوارٹر ڈگر میں پرائیویٹ میڈکل سنٹرز کی بھرمار ہے جس میں انسانی جانوں سے کھیلا جاتاہے اور چند ہفتوں کے دوران کئی قیمتی جانیں زیادہ نشہ دینے کی وجہ سے چلی گئی ۔صوبائی حکومت نے اگرچہ ڈاکٹرز کی تنحواہوں میں کئی گنا اضافہ کیاہے مگر ڈاکٹر ز ہسپتال کی بجائے پرائیویٹ کلینک پر توجہ دیتے ہیں ۔محکمہ تعلیم میں کلرکس باشاہ کی حکمرانی ہے ۔صوبائی حکومت کے واضح احکامات کے باوجود ایک ہفتہ کے اندر اندر درجنوں تبادلے کئے گئے جو رپورٹ محکمہ تعلیم نے ضلع کونسل میں پیش کی ہے ۔ہم اسے یکسر مسترد کرتے ہیں ،کنونئیر یو سف علی نے رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ محکمہ صحت کی کارکر دگی اور ضلع بونیر میں پرائیویٹ میڈیکل سنٹرز کی مکمل تفصیل ایک ہفتہ کے اندر ایوان میں پیش کیا جائے ،ضلع کونسل بونیر نے بجلی کی ناروالوڈ شیڈنگ کی خاطر ضلع بھر میں ماربل کار خانوں کو بند کرنے کی قرار داد متفقہ طور پر منظو ر کرلی ۔ضلع کونسل بونیر کا ایک روزہ اجلاس کنو نئیر یوسف علی خان کی زیر صدارت منعقد ہو ا۔اجلاس میں ضلع کونسل کے اراکین ،محکموں کے سربراہان نے کثیر تعداد میں شرکت کی ،محکمہ زراعت کے خوالہ سے کمیٹی کے چئیر مین شاہ جہان عرف شاہ جی نے رپورٹ پیش کی ۔اجلاس سے ضلع کونسل کے اراکین گل محمد خان عرف طوطا ،رشید خان ،ناظم یو سی گدئیزی سردار علی خان ،ریاض خان ،محمدی شاہ ۔ولی الرحمان ،عبدالراج خان ،افسر خان ،انعام الرحمان ایڈوکیٹ ،زرداد خان ،حجاب اللہ خان ،شیر محمد خان اور دیگر نے کہا کہ پورے بونیر میں قائیم محکمہ صحت کے مراکز اور خصوصا ہیڈ کوارٹر ہسپتال ڈگر کی کارکردگی نہ ہونے کی برابر ہے ،عوام کی سہولت کے لئے اس میں کو ئی چیز نہیں ہے ،ائے روز پرائیویٹ میڈیکل سنٹرز بن رہے ہیں جو عوام کے جانوں سے کھیلتے ہیں اور ان میڈیکل سنٹرز میں ناتجربہ کار عملہ بھیٹا ہے جسکے پاس کوئی ثبوت نہیں ہے انہوں نے محکمہ تعلیم کی کارکر دگی کے بارے میں شدید تخفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ضلع کونسل بونیر نے محکمہ تعلیم سے جو رپورٹ مانگی تھی ،محکمہ تعلیم کی رپورٹ کو ہم یکسر مستردکرتے ہیں ۔ضلع کونسل کے اراکین نے گو رنمنٹ ڈگری کالج ڈگر میں طلباء کی محدود سیٹوں پر شدید تخفطات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جو میرٹ انہوں نے رکھا ہے ،سرکا ری سکولوں کے طلباء میٹرک پاس کرنے کے بعد ان پر تعلیمی دروازے بند ہوجاتے ہیں ،ریاض خان نے کہا کہ ضلع کونسل بونیر ضلع کی امدن بڑھانے کے لئے ماربل کے را میٹریل پر ٹیکس عائد کرے تاکہ ضلع کے پیداوار میں اضافہ ہوسکے ،اپوزیشن لیڈر حاجی صدیق اللہ نے کہا کہ صوبائی حکومت نے ضلعی حکومتوں کو مکمل اختیارات دئے ہیں اب یہ انکی ذمہ داری ہے کہ و ہ اپنے اختیارات کا استعمال کس طرح کرتے ہیں ۔بونیر کے تمام محکموں کی کار کردگی سے عوام مطمیئن نہیں ہے ،انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے بونیر کے بہت سے منصوبوں کے لئے فنڈز فراہم نہیں کی ہے جس کی وجہ سے ان منصوبوں پر کام کا عمل رک گیاہے ۔ضلع ناظم بونیر ڈاکٹر عبیداللہ نے کہا کہ صوبائی حکومت نے ضلعی حکومتوں کو اختیارات دیکر انکا دیرینہ مسئلہ حل کردیاہے ،بونیر کے عوام نے ضلع کونسل بونیر کے اراکین کو اپنے مسائل کے حل کے لئے منتحب کئے ہیں ۔میں تمام ممبران کو ساتھ لیکر بونیر کے عوام کی مسائل ھل کرنے اور سرکاری اداروں کو عوام کے ماتحت کرنے کی کوشیش کروں گا ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -