6 ماہ ہوگئے، کیسے ڈاکٹرز ہیں جو ڈاکٹر عاصم کی بیماری نہیں جان سکے:عدالت

6 ماہ ہوگئے، کیسے ڈاکٹرز ہیں جو ڈاکٹر عاصم کی بیماری نہیں جان سکے:عدالت
6 ماہ ہوگئے، کیسے ڈاکٹرز ہیں جو ڈاکٹر عاصم کی بیماری نہیں جان سکے:عدالت

  

کراچی (ویب ڈیسک) احتساب بیورو کی عدالتوں کے منتظم جج نے ڈاکٹر عاصم کے خلاف فرٹیلائزر سیکٹر میں 462 ارب روپے کےرپشن سے متعلق ریفرنس کی سماعت 4 اگست کے لئے ملتوی کردی۔

اس موقع پر ڈاکٹر عاصم کی جانب سے ریڑھ کی ہڈی میں تکلیف اور اس کے علاج سے متعلق درخواست کی سماعت بھی ہوئی۔ ان کے وکیل کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر عاصم کی ریڑھ کی ہڈی میں تکلیف ہے اور اس حوالے سے جناح ہسپتال کی انتظامیہ نے رپورٹ بھی پیش کی ہے جس پر عدالت کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر عاصم کو 6 ماہ ہوگئے ہیں۔ ہسپتال میں اب تک ان کا علاج کیوں نہیں ہوا۔ کیسے ڈاکٹرز ہیں جو اب تک بیماری بھی نہیں جانچ سکے۔ جناح ہسپتال کو انتظام کرنا چاہیے۔ وہ بڑا ہسپتال ہے، طبی سہولت ضرور ملنی چاہیے۔ ہم بورڈ کے انچارج کو طلب کرلیتے ہیں۔

ڈاکٹر عاصم کا کہنا تھا کہ مجھے ہائیڈرو تھراپی کی ضرورت ہے، تکلیف بہت بڑھ گئی ہے۔ پیراسیٹا مول کی گولی دی جارہی ہے جو خود ہی خریدنا پڑتی ہے۔ عدالت کا کہنا تھا کہ کونسی پیراسیٹا مول دی جارہی ہے کہ مریض اب تک ٹھیک نہیں ہوا۔ عدالت کا کہنا تھا کہ عدالتی حکم کی آڑ میں آپ بار بار ہسپتال کا وزٹ کرتے ہیں۔ ڈاکٹر عاصم نے کہا کہ التمش جاتا ہوں۔ عدالت نے کہا کہ آپ کو صرف دو مرتبہ اجازت دی گئی تھی۔ عدالت نے میڈیکل بورڈ سے رپورٹ طلب کرلی۔

مزید :

کراچی -