شوبز رائونڈ اپ

شوبز رائونڈ اپ

ظفر عباس کچھی ڈرامہ سیریل ’’گھگی‘‘کے ایک اہم کردار میں کاسٹ

سینئر اداکار ظفر عباس کچھی کو ڈائریکٹر اقبال حسین کی نئی ڈرامہ سیریل ’’گھگی‘‘کے ایک اہم کردار میں کاسٹ کرلیا گیا ہے ۔اس ڈرامہ سیریل کے پروڈیوسرز اختر حسنین اورعدنان صدیقی ہیں جبکہ دیگر نمایاں فنکاروں میں راشد محمود،عدنان صدیقی،فرح طفیل اور راحیلہ آغا شامل ہیں۔ظفر عباس کچھی نے کہا کہ پاکستانی ڈراموں میں کام کرنا میرے لئے کسی اعزاز سے کم نہیں ہے۔میرے کام کو ناظرین بہت پسندکرتے ہیں جس کے لئے دل کی گہرائیوں سے ان کا شکری ادا کرتا ہوں۔فنکار کیلئے اس کے کام کی تعریف ہی دنیا کے کسی بھی انعام سے بڑھ کر ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا میں خود کو سیاست سے دور رکھتا ہوں میری تمام تر توجہ میرے کام پر ہے ابھی سیاست کیلئے وقت نہیں ہے۔ اداکاری میری پہنچا ن ہے میرے اس فن کی وجہ سے مجھے دنیا بھر میں شہرت ملی ہے اس سے کنارہ کشی کا سوچ بھی نہیں سکتا۔

پاکستان فلم انڈسٹری کا بہترین دور شروع ہونے والا ہے ،مناہل شاہ

معروف اداکارہ و ماڈل مناہل شاہ نے کہا ہے کہ میں نے جتنا بھی کام کیا ہے میں اس سے مطمئن ہوں او رجہاں تک ہو سکا میں نے بہتر سے بہتر پرفارم کرنے کی کوشش کی ۔جلد نمائش کے پیش کی جانے والی فلم ’’عالم‘‘میرے فنّی کیرئیر کا سنگ میل ثابت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ خدا کے فضل سے دیکھنے والوں نے میری پرفارمنس کو بھرپور سراہا اور آج میں جس مقام پر کھڑی ہوں اس میں میرے پرستاروں کاسب سے بڑا ہاتھ ہے ،میں ان کی محبتوں کی مقروض ہوں کیونکہ مجھے پورے ملک جس طرح سے محبت اور چاہت ملی وہ میرے لئے ناقابل فراموش ہے اور پرستاروں کی یہ محبتیں میری زندگی کا اثاثہ ہیں ۔ مناہل شاہ نے کہا کہ عنقریب پاکستان فلم انڈسٹری کا بہترین دور شروع ہونے والا ہے ،انڈسٹری سے وابستہ افراد نے اس حوالے سے منصوبہ بندی شروع کردی ہے اور مجھے قوی یقین ہے کہ فلمی

صنعت2017کے آخر میں بحرانی کیفیت سے نکل جائے گی ۔

وزیر اعظم پانامہ کیس ، فلم انڈسٹری کا مستقبل ایک بار پھر سیاست کی نظر

وزیر اعظم پانامہ کیس ، فلم انڈسٹری کا مستقبل ایک بار پھر سیاست کی نظر ہوگیا۔ حکومت پاکستان نے فلم انڈسٹری کو صنعت کا درجہ دیتے ہوئے خصوصی پیکج کا اعلان کرکے وزارت اطلاعات ونشریات و قومی ورثہ کو ہدایت تو کر دی کہ وزارت خزانہ اور متعلقہ اداروں کے ساتھ باہمی مشاورت سے اس پیکج کو جلد نافذ العمل شکل میں حکومت پاکستان کو حتمی منظوری کے لئے پیش کرے، تاہم تاحال فن وثقافت سے وابستہ افراد اور فلم انڈسٹری کی ترقی کے لئے حکومتی سطح پر کوئی بھی ایسے خاطر خواہ اقدامات ہوتے دکھائی نہیں دیئے جبکہ ادب اور فن کی تمام قابل رشک اور معتبر شخصیات سمیت فنون لطیفہ کے فروغ کیلئے بھی ایک انتہائی ٹھوس اور جامع پیکیج تیار کرنے کا منصوبہ بنانے کا اعلان کیا گیا تھا جس پیکیج کے تحت بین الاقوامی معیار کو مد نظر رکھتے ہوئے’’ نیشنل فلم اینڈ براڈ کاسٹنگ کمیشن‘‘ ، ’’نیشنل فلم انسٹیٹیوٹ اور اکیڈمی‘‘ کا قیام عمل میں لایا جانا شامل تھا جبکہ جدید اسٹوڈیو اور دور حاضر اور مستقبل میں ٹیکنالوجی کے حوالے سے کسی بھی جدت سے ہم آہنگ آلات ، فنکاروں کے مالی معاملات میں بہتری اور فلاح و بہبود کیلئے ’’پرائم منسٹر آرٹسٹ ویلفیئر فنڈ‘‘کے قیام کا بھی اعلان کیا گیا تھا۔ یہ تمام اعلانات اور دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے ہیں۔ فلمی صنعت سے وابستہ مالیاتی قوانین میں نرمی اور ٹیکس سے استثنیٰ کی سہولیات بھی فراہم کرنے کا منصوبہ بنایا گیا تھا۔واضح رہے کہ ماضی میں بھی فلم انڈسٹری کی کئی اہم شخصیات نے صدر پاکستان سمیت حکومت کے اعلی عہدیداروں سے کئی اہم ملاقاتیں کی ہیں تاحال ان ملاقاتوں میں بھی کئے گئے وعدے وفا نہیں ہوسکے ہیں۔ اپنی مدد آپ کے تحت چلنے والی فلم انڈسٹری ایک بار پھر وعدوں اور اعلانات کی تکمیل کی منتظر ہے ۔

مزید : ایڈیشن 1