ہزاروں موٹر سائیکلوں اور گاڑیوں کے مالکان نئی کمپیوٹرائزڈ نمر پلیٹوں سے محروم

ہزاروں موٹر سائیکلوں اور گاڑیوں کے مالکان نئی کمپیوٹرائزڈ نمر پلیٹوں سے ...

لاہور (سپیشل رپورٹر) ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن مو ٹر رجسٹریشن برانچ لاہور کے چاروں زو ن کی من مانیاں، ہزاروں موٹر سائیکلوں اور گاڑیوں کے مالکان نئی کمپیو ٹرائزڈ نمبر پلیٹس سے محروم ہو گئے ، دوسری طرف محکمہ کے افسران نے غیر نمونہ نمبر پلیٹ والے گاڑی مالکان کے خلاف آپر یشن کر تے ہوے بھاری جر مانے وصول کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ، متعلقہ عملہ نے دفاتر میں نمبر پلیٹوں کے ڈھیرلگارکھے ہیں، ایڈریس پرمذکورہ نمبر پلیٹ کی عدم دستیابی کے باعث روزانہ دور دراز کے علاقوں سے آنے والے سیکڑوں سائلین منہ مانگی رشوت دینے پر مجبور ہو گئے۔ ریجن سی کے ڈائریکٹر محمد آصف نے چپ کا روزہ رکھ لیا ۔ محکمہ کے افسران نے سارا ملبہ نجی کوریئر کمپنی اور غلط ایڈریس قرار دے کر گاڑی مالکان پر ڈال دیا ہے۔ دریں اثناء بھاری رقم کے عوض ماتحت عملہ کی جانب سے ایجنٹوں کے ذریعے کئی شورومز مالکان کو غیر قانونی طریقہ سے کمپیوٹر نمبر پلیٹ فروخت کرنے کا انکشاف بھی سامنے آیا ہے جو نان کسٹم پیڈ اور چوری کی گاڑیوں پر لگا کر سفر کرتے ہیں۔ ذرائع کے مطابق ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن موٹر رجسٹریشن فرید کوٹ ہاؤس،فیصل ٹاؤ ن وغیرہ کے عملہ کی ملی بھگت کی وجہ سے ہزاروں نئی گاڑیوں کی رجسٹر یشن کروانے والے مالکان کو گاڑیوں کی کمپیوٹرائزڈ نمبر پلیٹ نہیں ملیں، وہ نمبر پلیٹ حاصل کرنے کے لئے ان کے دفاتر کے چکر لگا لگا کرتھک جاتے ہیں اور بعد ازاں ان کو ایجنٹوں کے ذریعے فی مو ٹر سائیکل2000 ،موٹر کار5000 اور بڑی گاڑیوں کے10000 تک رشوت وصول کر کے نمبر پلیٹس دی جاتی ہیں۔ ذرائع نے انکشاف کیا ہے مذکورہ آفس کے چند افسران نے شورومز کے مالکان کو بھی نمبر پلیٹ فروخت کی ہیں جو نان کسٹم پیڈ لگزری گاڑیوں کو لگا کر شادی بیاہ اور دیگر جگہوں پر استعمال کرتے ہیں۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ جب گاڑی مالکان ڈائریکٹر کے پاس نمبر پلیٹس نہ ملنے کی شکا یات لے کر جا تے ہیں تو وہ پولیس میں رپورٹ درج کروا کر ڈپلیکیٹ حا صل کر لینے کا مشورہ دیتے ہیں حالانکہ محکمہ کا عملہ گاڑی مالکان کو ان کی رہا ئش گاہ پر نمبرپلیٹ اور کاغذات بذریعہ نجی کوریئر کمپنی کی فیس کے علاوہ بھی پیسے وصول کر تا ہے ۔ محکمہ کے عملہ کے ہاتھوں ستائے ہوے سائلین اصغر علی،الیاس احمد، قربان علی،صفدر، روحیل اصغر،خواتین میں زبیدہ بی بی،نسرین امجد،شبانہ ممتاز وغیرہ نے وزیر اعلیٰ میاں شہباز شریف اورچیف سیکرٹری زاہد سعیدسے فوری طور پر ذمہ دران افسران کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ جب اس حوالے سے موقف دریافت کرنے کے لئے ڈائریکٹر محمد آصف سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہا گاڑی مالکان کے غلط ایڈریس کی وجہ سے ایسی شکا یا ت کا سامناہے جس کے ازالہ کے لئے سخت اقدامات کئے جا رہے ہیں اور اگر عملہ ملوث پایا گیا توذمہ دران کے خلاف کارروائی ہوگی۔

مزید : صفحہ آخر