ویلج کونسل سخاکوٹ کا 34 لاکھ96 ہزارروپے کا بجٹ منظور

ویلج کونسل سخاکوٹ کا 34 لاکھ96 ہزارروپے کا بجٹ منظور

سخاکوٹ( نمائندہ پاکستان) ویلج کونسل سخاکوٹ بازار نے سالانہ بجٹ برائے سال 201ّ7-18مبلغ 34لاکھ 96ہزار روپے کی منظوری دیدی ۔ سالانہ بجٹ اجلاس زیر صدارت کنوینیر سردار خان منعقد ہوا جس میں ناظم ویلج کونسل ساجد حسین مشوانی ، ممبران کونسل محمد انور لالا ، عقیل الرحمان ، سمیع اﷲ ، محمد اﷲ ،محمد عارف اور یوتھ ممبر وسیم عمر سمیت تمام ممبران اور سیکرٹری آصف خان نے شرکت کی ۔بجٹ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ناظم ساجد حسین مشوانی نے کہا کہ سال 2017-18کے لئے ٹوٹل بجٹ مبلغ 34لاکھ 96ہزار روپے رکھا گیا جس میں ترقیاتی کاموں کے لئے 30لاکھ روپے مختص کئے گئے ہیں جبکہ 4لاکھ 96ہزار روپے غیر ترقیاتی کاموں پر خرچ ہونگے ۔ کونسل نے متفقہ طور پر سالانہ بجٹ کی متفقہ طور پر منظوری دیدی ۔ اس موقع پر جنرل کونسلر عارف خان نے قرارداد کے ذریعے مطالبہ کیا کہ سخاکوٹ آئے روزہیروئن ، چرس ، شراب سمیت دیگر منشیات اور جواء بازی میں اضافہ ہورہا ہے جس سے نوجوان نسل تباہی کی طرف جارہی ہے اس لئے منشیات اور جواء بازی کے روک تھام کے لئے فی الفور اور عملی اقدامات کئے جائیں اور سخاکوٹ میں بنائے گئے ویٹنگ روم کی پبلک لیٹرینوں سے ہونے والا آمدن سخاکوٹ میں ترقیاتی کاموں پر خرچ کیا جائے ۔ نائب ناظم سردار خان نے کہا کہ سخاکوٹ بازار میں گاڑیوں کی تیز رفتاری سے اب تک کئی قیمتیں جانیں ضائع ہوچکے ہیں اس لئے مین بازار میں سکولوں کے قریب کیٹ آئیز لگائے جائیں تاکہ قیمتی جانوں کے ضائع ہونے کے خدشات نہ ہوں ۔ وسیم عمر اور سمیع اﷲ نے قراردادوں کے ذریعے مطالبہ کیا کہ عبد الرزاق کورونہ اور فخر آفغان کلے میں نکاس آب اور صفائی کا بندوبست کیا جائے تاکہ جان لیوا بیماریاں پھیلنے کا خدشہ نہ ہوں کیونکہ مذکورہ علاقوں میں نکاس آب کا کوئی انتظام موجو د نہیں ہے جس کی وجہ سے رہائشی علاقے جوہڑوں میں تبدیل ہو گئے ہیں اور ساتھ ہی صفائی کے اختیارات ویلج کونسلوں کو دئیے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ سخاکوٹ قصاب خانہ کے بد بُو نے لوگوں کی زندگی آجیرن بنا دی ہے اس لئے روزانہ کے بنیاد پر اس کی صفائی کی جائے اور ساتھ ہی ساتھ ناکارہ واٹر سپلائی اسکیم کے لئے منظور شدہ نئے پائپ جلد از جلد بچھائی جائیں ۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ سخاکوٹ میں آوارہ کتوں کو ٹھکانے لگانے اور مچھر مار سپرے کا بندوبست کیا جائے ۔ کونسل ممبران نے سالانہ مطالعاتی ٹوور کرانے کا بھی مطالبہ کیا ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر