’آپ کا حمل ضائع ہوگیا‘ خاتون کو ڈاکٹر نے جواب دے دیا، سرجری کروانے ہسپتال گئی تو ڈاکٹر نے معائنہ کرتے ہی ایسا انکشاف کردیا کہ میاں بیوی دونوں دنگ رہ گئے، حمل ضائع نہ ہوا تھا بلکہ۔۔۔

’آپ کا حمل ضائع ہوگیا‘ خاتون کو ڈاکٹر نے جواب دے دیا، سرجری کروانے ہسپتال ...
’آپ کا حمل ضائع ہوگیا‘ خاتون کو ڈاکٹر نے جواب دے دیا، سرجری کروانے ہسپتال گئی تو ڈاکٹر نے معائنہ کرتے ہی ایسا انکشاف کردیا کہ میاں بیوی دونوں دنگ رہ گئے، حمل ضائع نہ ہوا تھا بلکہ۔۔۔

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں ایک حاملہ خاتون کے جسم سے خون آنے لگا تو اس کا شوہر اسے ہسپتال لے گیا۔ ڈاکٹروں نے کہا کہ اس کا حمل ضائع ہو چکا ہے، بچہ جسم میں مر چکا ہے، چنانچہ آپریشن کرکے بچے کو نکلوا دو، مگر جب خاتون کا شوہر اسے دوسرے ہسپتال لے گیا تو وہاں ڈاکٹر نے ایسا انکشاف کر دیا کہ دونوں میاں بیوی دنگ رہ گئے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 36سالہ الزبتھ سٹیونزنامی خاتون کو اس کا شوہر54سالہ آئیان فولر ’وائٹ شیپل‘ کے علاقے میں واقعے رائل لندن ہسپتال لے کر گیا جہاں ڈاکٹروں نے حمل ضائع ہونے کی خبر سنادی اور سرجری کروانے کا کہہ دیا۔ سرجری کروانے کے لیے الزبتھ کا شوہر اسے کوئنز ہسپتال لے گیا جہاں ڈاکٹر نے اس کا معائنہ کرتے ہی بتا دیا کہ اس کا حمل ضائع نہیں ہوا تھا اور اس کے پیٹ میں بچہ زندہ تھا بلکہ وہ ’کوریوڈیسیڈول ہیماٹوما‘ نامی بیماری کا شکار تھی جس کی وجہ سے اس کے جسم سے خون بہنا شروع ہو گیا تھا۔

نوجوان لڑکے نے اپنے 2 دوستوں سے اپنی ہی گرل فرینڈ کا ریپ کروادیا، کس چیز سے بچنے کیلئے یہ شرمناک ترین کام کیا؟ شاید کبھی شیطان بھی ایسا طریقہ نہ سوچ سکے

آئیان فولر کا کہنا تھا کہ ”رائل لندن ہسپتال میں ایک ایمرجنسی کی وجہ سے میری بیوی کی سرجری نہ ہو سکی جس پر مجھے اسے کوئنز ہسپتال لیجانا پڑا، لیکن یہ ہمارے لیے خوش قسمتی کا باعث بن گیا، کیونکہ اگر رائل لندن ہسپتال میں سرجری ہو جاتی تو وہ میرے زندہ بچے کو مردہ سمجھ کر مار ڈالتے۔کوئنز ہسپتال کے ڈاکٹروں نے بتایا کہ ہمارا بچہ زندہ ہے اور بالکل صحت مند ہے۔ ہم نے رائل لندن ہسپتال کے خلاف شکایت درج کروا دی ہے۔ ہمیں وضاحت چاہیے کہ آخر انہوں نے ایسی سنگین غلطی کیوں کی۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس