اسسٹنٹ کمشنر ریونیو مویشی منڈیو ں تک محدود، رجسٹریاں اور انتقالات مؤخر

اسسٹنٹ کمشنر ریونیو مویشی منڈیو ں تک محدود، رجسٹریاں اور انتقالات مؤخر

  

لاہور(اپنے نمائندے سے)صوبائی دارلحکومت کے محکمہ ریونیو کے اسٹنٹ کمشنرزمویشی منڈیوں تک محدود ہو کر رہ گئے۔ پرچہ رجسٹری، دورہ پروگرام انتقالات کی تصدیق اور جمندی کی تکمیل کیلئے کیے جانے والے بنیادی کام بھی نظر انداز کر دئیے گئے۔ شہریوں کی کثیر تعداد دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہو گی۔ تفصیلات کے مطابق صوبائی دارلحکومت کے محکمہ ریونیو کے انتظامی افسران اضافی ڈیوٹیوں میں مصروف ہو کر اپنے بنیادی کام بھول گے جس کی وجہ سے پٹواریوں، قانگو اور ریونیو آفسران نے بھی اپنے اپنے زمہ داری پوڑی کرنے کی بجائے عوام الناس کو خوار کرنے اور رشوت وصولی پر مجبور کردیا۔ اعلی افسران کی عدم دسیتابی کے باعث ریونیو سٹاف پرچہ رجسٹری، انتقال کے اندراج کرنے کی بجائے شہریوں سے فی کس انتقال ہزاروں روپے رشوت وصولی کر رہے ہیں۔شہریوں نے روزنامہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ چیک اینڈ بیلینس کا سسٹم نہ ہونے کے باعث اس وقت محکمہ ریونیو کا ریونیو سٹاف قصائی بن چکا ہے۔ معلوم ہوا کہ اسٹنٹ کمشنر صابان نے کرونا ایس او پی اور مویشی منڈیوں میں مصروفیت کے باعث جمندی وں کی تیاری، ریکارڈ ایک انسپکشن اور سرکاری جائیداوں پر قبضے کی روک تھام کیلئے بھی کوئی اقدامات نہیں کیے جارہے۔تاہم ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو مہر عبدالروف کا کہنا ہے کہ ریونیو سٹاف کو پرچہ رجسٹری قانون پر عمل کرنے کا پابند بنایا جارہا ہے۔

جمندی وں کی تیکمل کیلے بھی ٹاسک دیدیا گیا ہے اور قبضوں کی روک تھام کیلے بھی وقفے وقفے سے آپریشن جاری ہیں

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -