عید سے قبل پنجاب میں لاک ڈاؤن کی منظوری، کورونا سے اموات میں 80فیصد کمی آگئی: ظفر مرزا

عید سے قبل پنجاب میں لاک ڈاؤن کی منظوری، کورونا سے اموات میں 80فیصد کمی آگئی: ...

  

لاہور (نیوز رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعلیٰ پنجاب نے عید کے موقع پر صوبے میں اسمارٹ لاک ڈاؤن کی منظوری دیدی، مارکیٹیں اور شاپنگ مالز عید سے تین روز قبل بند کردیئے جائیں گے گیا۔چیف سیکرٹری پنجاب نے کہا کہ کورونا سے بچاؤ کیلئے عید سے قبل اسمارٹ لاک ڈاؤن مجبوری ہے، سول سیکرٹریٹ کے ذرائع کے مطابق اسمارٹ لاک ڈاؤن کا نوٹیفکیشن تیار کر لیا جو کسی وقت بھی جاری ہو سکتا ہے۔اسمارٹ لاک ڈاؤن کے دوران مویشی منڈیاں، یوٹیلیٹی اسٹورز، دودھ، دہی، تندور اور میڈیکل اسٹور کھلے رہیں گے۔ مویشی منڈیوں میں ایس او پیز اور سکیورٹی کے انتظامات مزید سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔دریں اثنا عیدالاضحیٰ کی نماز کے لیے پنجاب حکومت کی طرف سے ایس او پیز جاری کر دیئے گئے ہیں جن پر عمل درآمد کی ذمہ داری ضلعی حکام کے ساتھ ساتھ مساجد کمیٹیوں پر عائد ہو گی۔ خلاف ورزی سامنے آنے پر قواعد کے مطابق کارروائی بھی کی جائے گی۔سمارٹ لاک ڈاؤن اور مویشی منڈیوں میں ایس او پیز پر عملدرآمد کیلئے انتظامات کا جائزہ لینے کیلئے ایک اعلیٰ سطحی اجلاس چیف سیکرٹری پنجاب جواد رفیق ملک کی زیر صدارت 9۔ایکمن روڈ منعقد ہوا۔ ایڈیشنل چیف سیکر ٹری داخلہ مومن آغا، آئی جی پولیس شعیب دستگیر،سیکرٹری پرائمری صحت کیپٹن (ر) محمد عثمان، کمشنر لاہور ڈویژن دانش افضال اورڈی آئی جی آپریشنز لاہور اشفاق احمد خان نے اجلاس میں شرکت کی جبکہ سیکرٹر ی بلدیات ڈاکٹر احمد جاوید قاضی، تمام ڈویژنل کمشنرز اور آر پی اوز ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے چیف سیکرٹری نے کہا کہ حکومت کیلئے انسانی جانوں کا تحفظ سب سے زیادہ اہم ہے، کورونا وائرس سے بچاؤ کیلئے مویشی منڈیوں میں ایس اوپیز پر عملدرآمدسمیت ہر ممکن اقدامات کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ لاہور اورصوبے کے دیگر متاثرہ شہروں میں سمارٹ لاک ڈاؤن کے مثبت نتائج برآمد ہوئے ہیں اورکورونا وائرس کیسز میں نمایاں کمی آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عیدا لاضحیٰ سے قبل بازاروں میں خریداری کی سرگرمیوں سے کورونا وائرس پھیلنے کا خدشہ ہے اس لئے عید الفطر کے تجربے کو مدنظر رکھتے ہوئے صوبائی حکومت نے مفاد عامہ میں اس مذہبی تہوار کے موقع پر سمارٹ لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا ہے۔چیف سیکرٹری نے تمام ڈویژنل کمشنرز کو ہدایت کی کہ مویشی منڈیوں میں ماسک کی پابندی،معمر افراد اور بچوں کے داخلہ کی ممانعت سمیت دیگر ایس او پیز پر سختی سے عملدرآمد کرایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ مویشی منڈیوں میں محکمہ صحت، بلدیات اور لائیوسٹاک کے اہلکاروں کو تعینات کیا جائے اور مانیٹرنگ کیلئے انتظامیہ،متعلقہ محکموں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کی مشترکہ ٹیمیں تشکیل دی جائیں۔ انہوں نے حکم دیا کہ سماجی فاصلے کو یقینی بنانے کیلئے مخصوص تعداد میں افراد کو مویشی منڈیوں میں داخلے کی اجازت دی جائے اور انٹری پوائنٹس پر سکریننگ کیلئے خصوصی کاؤنٹر قائم کیا جائے۔ چیف سیکرٹری نے عید کے موقع پر انسداد ڈینگی سرگرمیوں کو جاری رکھنے اور سالڈ ویسٹ مینیجمنٹ پلان تیار کرنے سے متعلق ہدایات بھی جاری کیں۔ آئی جی پنجاب شعیب دستگیر نے آرپی اوز کو حکم دیا کہ نماز عید کے اجتماعات کیلئے فول پروف سیکیورٹی، سماجی فاصلہ اور دیگر حفاظتی اقدامات کو یقینی بنایاجائے۔دریں اثناعیدالاضحی کے موقع پر لگنے والی 12 مویشی منڈیوں کے اوقات کار مزید تین گھنٹے بڑھا دیئے گئے، منڈیاں صبح چھ بجے سے رات دس بجے تک کھلی رہیں گی

لاک ڈاؤن منظوری

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے کہا ہے کہ پاکستان میں کورونا سے متعلق صورتحال بہتر ہو رہی ہے اور ملک میں وائرس سے متعلق عالمی اداروں کے اندازے دھرے کے دھرے رہ گئے ہیں۔ عالمی سطح پر بھی پاکستان میں کورونا کیسز میں کمی کا اقرار کیا جا رہا ہے۔ ظفر مرزا نے کہا ہے کہ ملک میں کورونا سے اموات میں 80 فیصد کمی آئی ہے، مثبت کیسز 23 فیصد سے کم ہوکر 6 فیصد پر آگئے ہیں،بعض لوگ بیماری میں کمی سے متعلق شکوک و شبہات کا شکار ہیں، کسی کو شک و شبہ کا شکار نہیں ہونا چاہیے،عید پر میل ملاپ سے بیماری کے پھیلاؤ میں اضافہ ہوتا ہے، لوگ انتہائی ذمہ داری کا مظاہرہ کریں۔ اتوار کو میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ملک میں وبا کے پھیلاؤ میں بہت کمی آئی ہے جس پر اللہ کا بہت شکر ادا کرنا چاہیے، بعض لوگ بیماری میں کمی سے متعلق شکوک و شبہات کا شکار ہیں تاہم اس کمی کا بین الاقوامی طور پر اعتراف کیا گیا ہے اور کسی کو شک و شبہ کا شکار نہیں ہونا چاہیے۔فڈاکٹر ظفر مرزا نے بتایا کہ اگر پہلے کورونا کے 100 میں سے 23 ٹیسٹ مثبت آتے تھے تو اب وہ 6 یا 7 پر آگئے ہیں جبکہ اموات میں 80 فیصد کمی ہوگئی ہے۔ظفر مرزا نے کہا کہ ملک کواب دوبڑے چیلنجز عیدالاضحی اور محرم الحرام درپیش ہیں، دیگر ممالک کے تجربے سے پتہ چلتا ہے کہ کورونا وبا میں کمی کے بعد دوبارہ اضافہ بھی ہوسکتا ہے، اس لیے آئندہ دنوں میں پاکستان میں بھی وبا میں دوبارہ اضافے کا قوی امکان ہے، لہذا عید پر میل ملاپ سے بیماری کے پھیلاؤ میں اضافہ ہوتا ہے، لوگ انتہائی ذمہ داری کا مظاہرہ کریں۔معاون خصوصی نے کہا کہ عید الفطر کے تجربے کی روشنی میں بہت زیادہ سوچ بچار اور علما سے مشاورت کے بعد عید الاضحی کے لیے ایس او پیز بنائے ہیں اور قومی حکمت عملی بنائی گئی ہے، صدر مملکت عارف علوی خود اس معاملے کو دیکھ رہے ہیں، اب 4 چیزوں پر خصوصی توجہ کی ضرورت ہے، مویشیوں کی خرید و فروخت کیلئے شہر میں منڈی لگانے کی اجازت نہیں، شہری انفرادی کی بجائے اجتماعی قربانی کو ترجیح دیں، قربانی اور گوشت کی تقسیم کے وقت لوگوں کا جمگھٹا نہ لگائیں، عوام سے درخواست ہے کہ اسے عام عید نہ سمجھیں بلکہ مختلف سمجھیں، احتیاطی تدابیر اختیار کریں۔

ظفر مرزا

مزید :

صفحہ اول -