پالیسی بنانا حکومت کا کام ہے ،عدالت مداخلت نہیں کرے گی،اسلام آبادہائیکورٹ تعلیمی ادارے کھولنے کی درخواست نمٹا دی

پالیسی بنانا حکومت کا کام ہے ،عدالت مداخلت نہیں کرے گی،اسلام آبادہائیکورٹ ...
پالیسی بنانا حکومت کا کام ہے ،عدالت مداخلت نہیں کرے گی،اسلام آبادہائیکورٹ تعلیمی ادارے کھولنے کی درخواست نمٹا دی

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)کورونا کے باعث بند تعلیمی ادارے کھولنے کی درخواست پر چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ پالیسی بنانا حکومت کا کام ہے ،عدالت مداخلت نہیں کرے گی،منتخب حکومت عوام کو جوابدہ ہے حالات دیکھ کر وہی فیصلہ کریں گے۔

نجی ٹی وی کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں کورونا کے باعث بند تعلیمی ادارے کھولنے کی درخواست پر سماعت ہوئی،چیف جسٹس اطہر من اللہ نے درخواست پر سماعت کی،وکیل درخواست گزار نے کہاکہ کورونا کی وجہ سے تمام تعلیمی ادارے چند ماہ سے بند ہیں،چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ پالیسی بنانا حکومت کا کام ہے ،عدالت مداخلت نہیں کرے گی، منتخب حکومت عوام کو جوابدہ ہے حالات دیکھ کر وہی فیصلہ کریں گے۔

عدالت نے کہاکہ انفرادی طور پر نہیں بلکہ ایسوسی ایشن کے ذریعے متعلقہ اتھارٹی سے رجوع کریں، چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ یہ نہیں ہو سکتا کہ حکومت توجہ نہ دے رہی ہو، صرف سکولز مالکان نہیں بچوں کا بھی حرج ہو رہا ہے،یہ کہنا کہ یہ معاملہ حکومت کے مدنظر نہیں درست نہیں، عدالت نے درخواست گزار کو متعلقہ فورم سے رجوع کی ہدایت کرتے ہوئے درخواست نمٹا دی۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -