صرف گولی دہشتگردی نہیں گالی بھی دہشتگردی ہے: سنی علماء کونسل 

  صرف گولی دہشتگردی نہیں گالی بھی دہشتگردی ہے: سنی علماء کونسل 

  

 چکدرہ(تحصیل رپورٹر)سنی علماء کونسل پاکستان کے مرکزی صدر علامہ اورنگزیب فاروقی نے کہاہے کہ صحابہ کرام محسن امت دین اسلام کے مقدمے کے گواہ ہیں، دین اسلام کی عمارت کے مضبوط ستون اور پیغمبرؐاور امت کے مابین واسطہ صحابہ کرام تھے،وہ صحابہ کرام کی آئینی حیثیت اور ہماری ذمہ داریوں کے موضوع پر چکدرہ پریس کلب میں منعقدہ عظمت صحابہ کانفرنس سے خطاب کررہے تھے، آدینزئی قومی جرگہ کے اراکین، مقامی علماء اور عمائدین علاقہ کی بڑی تعداد اس موقع پر موجود تھی،  علامہ اورنگزیب فاروقی نے کہاکہ دین اسلام کے دشمن صحابہ کرام کے کردار کو مشکوک بناکر دین اسلام کو کمزور کرنے کے درپے ہیں  اور صرف گولی دہشتگردی نہیں گالی بھی دہشتگردی ہے مگرہمیں صحابہ کرام کی شان میں گستاخی کسی طور قبول نہیں،وہ آئین وقانون کے ذریعے صحابہ کی توہین کاتدارک چاہتے ہیں اور ان کامطالبہ ہے کہ صحابہ کی شان میں گستاخی کرنے والوں کو سزائے موت کاقانون بنایاجائے، انہوں نے کہاکہ دین اسلام پھیلانے میں صحابہ رسولؐ کاکلیدی کردار روز روشن کی طرح عیاں ہیں انہوں نے پوری سیرت النبیؐ کو من وعن محفوط بناکر جس طرح امت تک پہنچایاہے یہ کام آج کی جدید ٹیکنالوجی بھی نہیں کرسکتی، صحابہ دین اسلام کے امین اور اس کی تکمیل کے ضامن تھے اور عظمت صحابہ کاوجود برقرار رکھنے کے لئے پوری امت کو ایک ساتھ آگے بڑھنا ہوگا،انہوں نے خیبرپختونخوااسمبلی میں تحفظ ناموس صحابہ قراردادکی منظوری اور ایم این اے عبدالاکبر چترالی کی جانب سے قومی اسمبلی میں بل پیش کرنے کا خیر مقدم کرتے ہوئے زور دیا کہ منتخب ممبران اسمبلی کو اس بل کی مکمل تائید وحمایت کرنی چاہئے کیونکہ شان صحابہ پر کسی ایک مکتبہ فکر کی اجارہ داری نہیں ہے یہ ہم سب کی اجتماعی ذمہ داری ہے،سنی علماء کونسل کے صوبائی صدر مولانا عطاء محمد دیشانی اورضلعی صدر لوئردیر مولاناعبیداللہ انور نے بھی خطاب کیا جبکہ جماعت اسلامی کے تحصیل امیرسلطنت یارایڈووکیٹ، قومی جرگہ کے چیئرمین خورشید علی خان، سابق وفاقی وزیر مملکت ملک عظمت خان اور نون لیگ کے رہنما بیرسٹر عطاء اللہ خان بھی اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے علامہ اورنگزیب فاروقی اور دیگر مہمانوں کا خیر مقدم کیااور انہیں اپنی طرف سے مکمل تعاون کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ عظمت صحابہ پر ان کی جانیں بھی قربان ہیں۔سابق صوبائی وزیر بخت بیدارخان،واصل خان بہرام خیل،راضی خان ایڈووکیٹ اور چکدرہ پریس کلب کے اراکین بھی موجود تھے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -