قیدیوں کے مسائل حل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، چودھری اعجاز اصغر

قیدیوں کے مسائل حل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، چودھری اعجاز اصغر

لاہور (کرائم رپورٹر) کیمپ جیل لاہور کے سپرنٹنڈنٹ چودھری اعجازاصغر نے نمائندہ پاکستان کو جیل میں کرپشن سمیت دیگر درپیش مسائل کے بارے میں موقف اختیار کرتے ہوئے کہا کہ میری کیمپ جیل میں تعیناتی بطور سپرنٹنڈنٹ 9 ستمبر 2011ءہوئی۔ جیل میں کرپشن ڈیوٹی غفلت وطیرہ بن چکا تھا 48 جیل ملازمین کو مختلف نوعیت کی سنگین محکمانہ سزائیں دی گئی۔ خصوصاً سائلین سے رشوت کلب کرنا ناقابل برداشت تھا۔ جیل میں بند گنجائش سے زیادہ قیدی و حوالاتیوں کا بند ہونا یہ مسئلہ حل کرنے کی کوشش کی جاری ہے۔ اس کے باوجود اپنی ذاتی کاوش سے مختلف مخیر حضرات کی مدد سے کیمپ جیل میں وہ کام کروائے گئے ہیں جو اس سے قبل نہیں کروائے گئے تھے ۔جن میں 8 لاکھ روپے مالیت کے دو واٹر فلٹر پلانٹ لگوائے ان کے ساتھ 6 لاکھ روپے مالیت کے واٹر کولڈ مشینیں لگوائی جس سے قیدی حوالاتیوں کو 24 گھنٹے شدید گرمی میں ٹھنڈا پانی میسر ہو۔ 10 لاکھ روپے مالیت سے جیل کیچن میں صفائی میں صفائی کیلئے ٹائل لگوائی گئی۔ چولہے لگوائے گئے ۔ کیچن کیلئے نئے برتن منگوائے گئے ۔ 5 الیکٹرک واٹر کولر جیل کے مختلف مقامات پر نصب کئے گئے۔ قیدیوں کی حفاظت اور سیکورٹی کی ڈیوٹی سرانجام دینے والے جیل ملازمین کو جیل کی دیواروں پر بنی برجیاں پر ایک ایک واٹر کولر شربت اور چائے مہیا کی جارہی ہے۔ مختلف بیرکوں اور چکیوں میں عرصہ دراز سے بہت سے پنکھے خراب ہے۔ 50 نئے پنکھے لگوائے گئے۔ 5 لاکھ روپے کے 2 الیکٹرک چیلر لگوائے گئے۔ جیل میں سیکورٹی انتظامات کیلئے 5 لاکھ روپے مالیت کی پوسٹ مورچے بنوا کر بیریل لگوائے گئے ہیں۔ ملاقات کیلئے خصوصاً انتظار گاہ بنا کر یہاں پر نئے پنکھے اور واٹر کولر رکھا گیا ہے تاکہ سائلین گرمی کی شدت سے پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ سیکورٹی انتظامات میں غفلت کرنے والے جیل ملازمین یا آفیسر کو قطعی معاف نہیں کیا جاتا ہے چاہے وہ کتنا ہی بااثر کیوں نہ ہو۔ کچھ عرصہ قبل سے ذاتی کاوش سے اپنے زمانہ طالب علمی کے تین درستوں کو بلوا کر درخواست کرنے 3 لاکھ 50 ہزار روپے سے 10 ایسے غریب قیدی جو جرمانہ ادا کرنے کی سکت نہیں رکھتے تھے وہ جرمانہ ادا کروا کر انہیں رہائی دلوائی گئی۔ جیل سپرنٹنڈنٹ چودھری اعجاز اصغر نے مزید بتایا کہ جیل میں سب سے بڑا درپیش مسئلہ لوڈشیڈنگ کا ہے دو طرفہ بجلی کنکشن کیلئے ذاتی طور پر ممبر پاور سے ملاقات کی گئی جنہوں نے آئندہ چند روز میں ڈبل بجلی کنکشن لگانے کی یقین دہائی کروائی ہے۔جس کا خرچہ تقریباً 10 لاکھ روپے آئیگا۔ جس کے لئے مخیر حضرات سے رابطے کئے جا رہے ہیں۔ ڈبل بجلی کنکشن سے لوڈشیڈنگ کا مسئلہ حل ہو جائیگا اور آگ برستی شدید گرمی سے قیدی حوالاتی بچ کر سکون کا سانس لینگے۔ اس سے قبل اپنی تعیناتی کے دوران ملتان سنٹرل جیل میں ڈبل بجلی کنکشن لگوانا تھا۔ کیمپ جیل میں ہر آنے والا قیدی حوالاتی کے کوائف اب کمپیوٹر سسٹم میں ریکارڈ بنایا جا رہا ہے جس کے لئے 3 نئے کمپیوٹر لگوائے گئے ہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1